نئی دہلی:ایودھیا میں رام مندر کے بھومی پوجن کے بعد کیا مودی سرکار آبادی کنٹرول قانون پر کام کر رہی ہے؟ کیا حکومت پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں آبادی پر قابو پانے کے لئے بل لا سکتی ہے؟ کیا یکساں سول کوڈ کی بھی تیاری ہے؟ یہ سوالات اس لئے پیدا ہوئے ہیں کہ بی جے پی کے راجیہ سبھا ممبر انیل اگروال نے وزیر اعظم مودی کو خط لکھ کر آبادی کنٹرول کے لئے پارلیمنٹ سے بل پاس کروانےکی اپیل کی ہے۔ انہوں نے وزیر اعظم مودی سے گزارش کی ہے کہ 15 اگست کو یوم آزادی کے موقع پر وہ شہریوں کو آبادی پر قابو پانے کے بارے میں آگاہ کریں اورآئندہ پارلیمنٹ اجلاس میں قومی مفاد میں آبادی کنٹرول بل کو بھی منظور کریں۔

وزارت صحت و خاندانی بہبود میں نوجوانوں کے امور ،کھیل اور ہندی کی مشاورتی کمیٹی کی انفارمیشن ٹکنالوجی امور سے متعلق اسٹینڈنگ کمیٹی کے ممبر ڈاکٹر اگروال نے وزیر اعظم مودی سے کہا ہے کہ’’آپ نے 15 اگست 2019 کے موقع پر ملک میں آبادی کو کنٹرول کرنے کی ضرورت بیان کی تھی۔ اب وقت آگیا ہے کہ اس قرارداد کو پورا کیا جائے‘‘۔ انہوں نے لکھا ہے کہ :”میری آپ سے درخواست ہے کہ آئندہ پارلیمنٹ کے اجلاس میں اس ضمن میں ایک مناسب بل لانے پر غور کریں‘‘۔

 

خط کا مکمل مضمون کچھ اس طرح ہے:’’معزز وزیر اعظم! پورے ہندوستان کے تمام شہریوں اور دنیا بھر کے ہندوؤں کی طرف سے ، میں آپ کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں کیونکہ 500 سال کے طویل انتظار کے بعد آستھا اور امید کا ایک نیا سورج طلوع ہوا ہے۔ ہندو فلسفہ کے مطابق دنیا کی ہر چیز خدا کی مرضی سے ہوتی ہے اور خدا اپنے فرائض سرانجام دینے کے لئے افراد کا انتخاب کرتا ہے۔ خدا نے آپ کو 130 کروڑ ہندوستانیوں کی توقعات کو پورا کرنے کے لئے منتخب کیا ہے۔
15 اگست 2019 کو آپ نے ملک کو آبادی کنٹرول قانون کے اقدامات کے بارے میں یقین دلایاتھا۔ اب وقت آگیا ہے کہ اس ہدف کو پورا کیا جائے۔ اسی لئے میں آپ سے درخواست کرتا ہوں کہ پارلیمنٹ کے آئندہ اجلاس میں اس موضوع پر مناسب بل پیش کیا جائے‘‘۔