ایمان اور علم اللہ کی دی ہوئی سب سے عظیم دولت : مولانا عبد القیوم قاسمی،

20

ایمان اور علم اللہ کی دی ہوئی سب سے عظیم دولت : مولانا عبد القیوم قاسمی،
نانپارہ. بہرائچ
(رپورٹ :محمد رضوان ندوی)

10 سالہ محمد النعمان کے تکمیل حفظ قرآن کے موقع پر منعقد تقریب میں علماء نے دی مبارکباد،
دنیا میں رہنے والے انسانوں کو خالق کائنات نے بہت سی نعمتیں دی ہیں، بعض نعمتیں اتنی عظیم اور بیش بہا ہیں جن کی پانچ دس فیصد قیمت بھی انسان پوری زندگی کما کر نہیں چکا سکتا، ایمان اور علم اللہ کی دی ہوئی سب سے عظیم دولت ہیں جن کا متبادل دنیا میں ہے ہی نہیں، اس لئے تمام انسانوں کو سب سے پہلے اپنے ایمان کی فکر کرنی چاہئے پھر علم کی سیڑھیاں چڑھتے چڑھتے اللہ کی رضا اور اس کا قرب حاصل کرنے کی ہر ممکن کوشش کرنی چاہئے، ان خیالات کا اظہار مولانا عبدالقیوم قاسمی بانی و ناظم جامعہ کاشف العلوم نانپارہ نے کیا، وہ محلہ قلعہ میں منعقد تقریب تکمیل حفظ قرآن کریم میں طلبہ اور عوام کو خطاب کر رہے تھے.
مہمان خصوصی مولانا عبد القیوم قاسمی نے ننھے محمد النعمان بن مولانا محمد رضوان ساکن محلہ قلعہ نزد شاہی جامع مسجد نانپارہ کو اس عظیم سعادت کے حصول پر مبارکباد پیش کی، دس سال سے بھی کم عمر میں قرآن مجید اپنے سینے میں محفوظ کرلینے پر ان کے اساتذہ قاری جنید احمد ہربس پوری، قاری محمد اسامہ اور قاری محمد ارشد قاسمی کی محنت، لگن اور والدین کی توجہ کی بھی تعریف کی، انھوں نے کہا کہ جن لوگوں نے بھی بچے کی تربیت اور تعلیم میں حصہ لیا ہے سب قابل قدر اور قابل تعریف ہیں، انھوں نے کہا کہ قرآن یاد کرلینا بلاشبہ ایک بڑا کام اور مفید عمل ہے لیکن قرآن کتاب ہدایت اور دستور حیات ہے اس لئے اس کو سینے میں بسانے کے ساتھ ساتھ عملی زندگی میں لانے کی ضرورت ہے.
تقریب کے آغاز میں متعلم محمد النعمان نے قرآن عظیم کی چند آیات مولانا اشتیاق احمد قاسمی استاد شعبہ عربی و فارسی جامعہ خیر العلوم نانپارہ کے سامنے پڑھ کر تکمیل کی سعادت حاصل کی،نظم مولانا عنایت اللہ قاسمی ناظم تعلیمات مدرسہ مظہر العلوم نے پیش کی، ان کی نظم.. اللہ مجھ کو حافظ قرآن بنادے.. بہت پسند کی گئی، مولانا عبد القیوم قاسمی کی دعا پر تقریب کا اختتام ہوا.
اس موقع پر مولانا الیاس قاسمی، مولانا مسیح الدین قاسمی، مولانا فیضان نسیم ندوی ،قاری رئیس احمد نوری ناظم مدرسہ مدینۃ العلوم نانپارہ، ماسٹر احمد اللہ خان، ماسٹر ماجد علی، قاری محمد یوسف امام شاہی جامع مسجد نانپارہ، مولانا ودود احمد قاسمی،محمد رضوان ندوی، ماسٹر کلیم الدین، حافظ عبداللہ نسیم وغیرہ خاص طور پر موجود رہے.