نتیش کمار کی پہلی ‘ورچوئل ریلی’ ہوئی فلاپ ، تیجسوی نے داغے 10 سوال !

31

پٹنہ ۔ 07 ستمبر 2020
کیا بہار کو اب نتیش کمار ناپسند ہیں؟ یہ سوال اس لیے اٹھنے لگا ہے کیونکہ سوشل میڈیا پر انھیں پسند کرنے والوں سے کئی گنا زیادہ ناپسند کرنے والے لوگ نظر آ رہے ہیں۔ دراصل بہار اسمبلی انتخاب کو لے کر وزیر اعلیٰ نتیش کمار کی جانب سے پیر کے روز پہلی ‘ورچوئل ریلی’ کی گئی۔ اعداد و شمار کے مطابق یہ ریلی پوری طرح سے فلاپ ثابت ہوئی۔

دعویٰ کیا گیا تھا کہ اس ریلی کو رئیل ٹائم میں 26 لاکھ لوگ دیکھیں گے۔ اس کے لیے تمام انتظامات بھی کیے گئے تھے، لیکن یہ دعویٰ صفر ہی ثابت ہوا۔ اتنا ہی نہیں، خبر لکھے جانے تک یو ٹیوب پر نتیش کمار کی ورچوئل ریلی کو تقریباً ایک ہزار لوگوں کے لائکس ملے ہیں، جب کہ ناپسند کرنے والوں کی تعداد 12 ہزار سے زیادہ ہو گئی ہے۔ اس سے ظاہر ہے کہ بہار کے لوگوں کو اب نتیش پسند نہیں آ رہے ہیں۔

پہلے تو تکنیکی خامیوں کی وجہ سے اس ریلی کی لائیو اسٹریمنگ سوشل میڈیا پلیٹ فارمس پر نہیں ہو پائی۔ نتیش کمار کی اس ورچوئل مہا ریلی کو کئی سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر لائیو دکھایا جانا تھا۔ لیکن تکنیکی دقت کی وجہ سے یہ ریلی صرف ایک سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر لائیو ہو پایا۔ اس پیج پر بھی رئیل ٹائم ناظرین زیادہ سے زیادہ 4.5 ہزار ہی دیکھنے کو ملے۔

نتیش کمار کی اس ورچوئل ریلی سے ٹھیک پہلے اسمبلی میں حزب مخالف لیڈر تیجسوی یادو نے وزیر اعلیٰ سے 10 سوال پوچھ کر انھیں تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ تیجسوی یادو انتخاب کی آہٹ کو محسوس کرتے ہوئے ان دنوں وزیر اعلیٰ نتیش کمار حکومت کی لگاتار تنقید کر رہے ہیں۔ تیجسوی نے پیر کی صبح ایک بیان جاری کر وزیر اعلیٰ سے 10 سوال پوچھے۔

تیجسوی نے پوچھا کہ گزشتہ 15 سال کی آپ کی مدت کار میں بہار میں بے روزگاری، غریبی، بھکمری اور ہجرت کیوں بڑھتی گئی، اور بہار میں بے روزگاری کی شرح 46.6 فیصد سب سے زیادہ کیوں ہے؟ بہار بے روزگاری کا اہم مرکز کیوں ہے؟

تیجسوی نے نتیش کمار کے خلاف حملہ آور رخ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ "نتیش کمار کی گزشتہ یکم مارچ کو گاندھی میدان کی ‘ایکچوئل ریلی’ کا حشر پورے ملک نے دیکھا تھا۔ خیر ‘ورچوئل’ کے بہانے ہم انھیں ایکچوئل ایشوز سے بھاگنے نہیں دیں گے۔” انھوں نے امید ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ پیر کی ریلی میں وزیر اعلیٰ ان سوالوں کا جواب ضرور دیں گے۔

آر جے ڈی لیڈر اور سابق نائب وزیر اعلیٰ تیجسوی یادو نے بہار کے پسماندہ رہنے کے اسباب پر بھی سوال کیا اور پوچھا کہ "نیتی آیوگ کے سارے انڈیکس پر بہار سال در سال کیوں پچھڑتا چلا گیا؟ نیتی آیوگ کی رپورٹ کے مطابق تعلیم، صحت اور یکسر ڈیولپمنٹ انڈیکس میں بہار آخری پائیدان پر کیسے پہنچا؟ اس کا قصوروار کون ہے؟” انھوں نے اپنے سوالات کی فہرست میں حکومت پر 58 گھوٹالے کرنے کا الزام بھی عائد کیا ہے۔