مولانا امین عثمانی ندوی

61

یہ سفید ریش، مسکراتا چہرہ، نوجوانوں کا سرپرست اور ہمہ دم فکر مند رہنے والی شخصیت مولانا امین عثمانی ندوی، جامعہ ملیہ اسلامیہ نئی دہلی سے پوسٹ گریجویٹ اور تاحال اسلامک فقہ اکیڈمی آف انڈیا کے سکریٹری اب ہمارے درمیان نہ رہے۔

إنا لله وإنا إليه راجعون، آپ عنفوان شباب میں ندوة العلماء کی طالب علمی کے زمانے ہی میں تحریک اسلامی سے منسلک ہوگئے تھے ۔

آغاز ہی میں ایس آئی ایم میں شمولیت اختیار کی پھر رکنیت جماعت اسلامی ہند سے بہرہ ور ہوئے۔ حافظ محسن اور سی پی ابراھیم مرحومین و مغفورین اور ڈاکٹر شکیل احمد صاحب کے ساتھ جامعة الفلاح میں "سیمی” کی یونٹ قائم کی۔ اور تادم واپسیں اسلام اور ملت اسلامیہ کی خدمت میں سرگرداں رہے۔ میرے دہلی کے قیام میں ایک مخلص مربی کی طرح اپنے مشوروں سے نوازتے رہے ۔

آج وہ محفلیں یاد آتی ہیں سارے منظر یک بعد دیگرے آنکھوں میں گھوم رہے ہیں۔ کیا جوش و ولولہ تھا اور ہم سب اس میں سرشار رہتے۔ اللہ تعالی ہند میں اسلام کا بول بالا کرے اور ملت اسلامیہ کو فی الحقیقت کامیاب دن دکھائے اور مولانا امین عثمانی ندوی کی خدمات جلیلہ کو قبول فرمائے، انکی مغفرت عظیم فرمائے، جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا کرے اور لواحقین کو صبر جمیل دے ساتھ ہی ملت کو انکا بدل عطا فرمائے ۔

آمین یا رب العالمین