مولانا عبدالقیوم شاکر الاسعدی کی رحلت پر جمعیۃ علماء ضلع بستی کے زیر اھتمام تعزیتی اجلاس

58
ملک ایک ممتاز عالم و فقیہ سے محروم ہوگیا

عارف باللہ حضرت مولانا عبدالقیوم شاکر الاسعدی مظاہری مہتمم مدرسہ عربیہ اصلاح المسلمین جمدا شاھی ضلع بستی یوپی کے سانحۂ ارتحال کے موقع پر جمعیۃ علماء ضلع بستی اترپردیش کےزیراھتمام بمقام جامع مسجد قصبہ رودھولی نزد پولیس اسٹیشن سماجی دوری کا لحاظ رکھتے ہوئے تعزیتی میٹنگ منعقد ہوئ نشست کا آغاز حافظ محمد عفان کے تلاوت کلام پاک سے ہوا میٹنگ میں ضلع جمعیۃ کی پانچوں یونٹوں کے صدور نظماء کے علاوہ ضلع کی مؤقر اور علمی ہستیاں آن لائن شریکِ اجلاس ہوئیں اجلاس میں مولانا کی رحلت کو علمی ادبی اور انتظامی خسارہ گردانا گیا آپکی دینی دعوتی اصلاحی انتظامی خدمات کو سراہاگیا اور آپکی اِس مشن کو نئ نسلوں کے لئے رہنما خطوط تسلیم کیاگیا ملی امور و ادارہ کی تعمیر تنظیم و ترقی کے تئیں آپ کی پالیسی پروگرام کو شاھکار سے تعبیر کیا گیا آئندہ کے لئے مولانا کی مشن کومستحکم و برقرار رکھنا اور ادھورے کام کو پایۂ تکمیل تک پہونچانا مولانا کے حق میں سچی خراج عقیدت پیش کرنے کے مترادف قرار دیا گیا اجلاس میں آپ کے لئے دعاء مغفرت کا اہتمام نعم البدل کے لئے آرزو کا اظہار اور پس ماندگان عقیدتمندگان وشاگردان بالخصوص مولانامرحوم کے بھتیجے مولانا ظہیرانوار قاسمی مہتمم دار العلوم الاسلامیہ بستی کو تعزیت پیش کیا گیا شریکِ اجلاس قاری شمیم اختر امام وخطیب جامع مسجد رودھولی نے اپنے افتتاحی خطاب میں کہا مولانا عبد القیوم شاکرالاسعدی ایک جیدالاستعداد ادیب اور نمونۂ اسلاف عالم دین تھے آپ جیسے عالِم کی موت واقعی پورےعالَم کی موت ہے انہوں نے مولانا مرحوم کی علمی ادبی اور انتظامی انہماک کو حسنِ اخلاص کا ثمرہ قرار دیا اور کہا کہ جب بھی میرا بغرض فراہمی چندہ مسجد حضرت کے یہاں جانا ہوتا نہایت ہی مشفقانہ انداز میں پیش آتے اور رودھولی مسجد کے لئے لوگوں سے تعاون کی ترغیب دیتے اور خوب خوب دعاؤں سے نوازتے جمعیۃ علماء ضلع بستی اترپردیش کے صدر مولانا عبدالقیوم قاسمی نے مولانا کی وفات کو ضلع جمعیۃ بستی کے لئے خسارہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ مولانا مرحوم ہمیشہ ضلع جمعیۃ بستی کے کاموں کو خوب سراہتے اور کارکنان کے حق میں دعائیں کرتے اور اپنے مدرسہ میں ضلع جمعیۃ کی میٹنگ کے انعقاد کا خواہشمند رہتے اوکئ بار اپنی نگرانی میں میٹنگ بھی کی ہے مولانا قاسمی نے نعم البدل کی دعا کرتے ہوئے کہا کہ ان شاءاللہ مدرسہ اصلاح المسلمین سے جمعیۃ کی وابستگی برقرار رہیگی ضلع جنرل سکریٹری مولانا قیام الدین القاسمی نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انکے حق میں دعاء مغفرت کی اور ارباب مدارس ائمۂ مساجد اور فرزندان توحید سے مولانا مرحوم کے لئے ایصال ثواب اور دعاء مغفرت کی اپیل کی یقینا موصوف صاحب نسبت بزرگ شخصیت اورجامعہ مظاہر علوم کے ابنائے قدیم اور مشاہیر فضلاء میں سے تھے ضلع سنت کبیر نگر تپہ اجیار کے مشہور مردم خیز گاؤں کرھی میں آپ کی ولادت یکم جنوری سنہ 1935ء مطابق 24/رمضان المبارک سنہ 1353ھجری میں ہوئ. آپ کی ابتدائی تعلیم مدرسہ جعفریہ ہدایت العلوم کرہی میں ہوئ جبکہ اعلیٰ تعلیم کے لئے آپ نے سنہ 1370ھجری میں جامعہ مظاہر علوم سہارنپور میں داخلہ لیا اور وہاں سے آپ نےسنہ 1374ھجری میں سند فراغ حاصل کیا حصول علم کے دوران ہی مولانا مرحوم کاروحانی و اصلاحی تعلق اپنے مشفق مربی استاذ شیخ مولانا اسعد اللہ رحمہ اللہ سے قائم ہوگیا تھا فراغت کے بعد آپ نے مدرسہ عربیہ اصلاح المسلمین جمداشاہی ضلع بستی کو اپنی علمی ودینی محنت کا مرکز بناکر زندگی کے پچاس سال سے زائد اسی ادارے کی چہار دیواری میں تعلیم وتعلم تعمیر وترقی اور اسکے اسحکام میں گذار دیئے جو یقینا مرحوم کے حق میں اپنے اسلاف واکابر کی دعاؤں وتوجہات کانتیجہ ہے انہوں نے کہا کہ ان شاءاللہ یہ باقیات صالحات اور یہاں سے علمی فیض پانیوالے ہزاروں فارغ التحصیل طلباء و طالبات اور بڑے بوڑھے نوجوان جو ملک اور بیرون ملک میں پھیلے ہوئے ہیں آپ کے لئے صدقہ جاریہ بنیں گے دعا ہے کہ اللہ تعالٰی مولانا مرحوم کی مغفرت فرمائے اور جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے پسماندگان عقیدت مندگان اور شاگردان کو صبر جمیل اور ادارہ کو نعم البدل عطا فرمائے مولانا عبد القیوم قاسمی بستوی
ناظم تنظیم وترقی جمعیۃ علماء مہا راشٹریہ ممبئ نےکہا ہم سب کے مخدوم محترم عارف باللہ شاکر الاسعدی صاحب کی رحلت ملت اسلامیہ کاا یک عظیم خسارہ ہے انہوں نے مرحوم کی شخصی وجود کو علاقہ اور عام مسلمانوں کے لیے شرک و بدعات سے پاک سچا ضامن قرار دیا اور مرحوم کے حق میں دعاء مغفرت کی تعزیتی اجلاس میں ذکر اللہ محمد ہاشم حافظ جمال احمد حافظ نظام الدین حافظ محمد ایوب تعزیت کنندگان میں . ضلع خازن مولانا حفیظ الرحمن قاسمی مولانا وصی اللہ قاسمی مفتی سعید احمد مظاہری مولانا ابوالکلام مظاہری مولانا عبدالحلیم مظاہری مولانا مہر علی مولانا اشرف جہانگیر مولانا محمد صدیق مولانا شبیر احمد مظاہری مولانا نبی سرورقاسمی مولانا ارشد اللہ مفتاحی مولانا محمداحمد قاسمی ڈاکٹر منصور احمد قاسمی ڈاکٹر افتخار احمد سماجی کارکن محمد شکیل کے علاوہ علاقہ کے علماء شامل رہے

ظفیر کرخی کی رپورٹ