کورنٹائن سنٹر میں سہولیات نہیں ہونے سے لوگوں نے مچایا ہنگامہ

49

ارریہ (معراج خالد)کورونا وائرس کے پیش نظر حکومت جہاں ایک جانب بیرون ریاست میں پھنسے طلبہ اور مزدوروں کو سوشل ڈسٹنس پر عمل کرتے ہوئے کروڑوں روپے خرچ کر لارہی ہے تو وہیں دوسری جانب مقامی اسٹیشن پر پہنچنے کے بعد سے ہی ضلع انتظامیہ کی لاپرواہی کے سبب سوشل ڈسٹنس کی دھجیاں اڑائی جارہی ہے بیرون ریاست سے آرہے لوگوں کو مقامی اسٹیشن پر پہنچنے کے بعد نہ صرف بسوں میں ٹھوس ٹھوس کر جانچ کیلئے لے جایاجاتاہے بلکہ کورنٹائن سنٹر میں بھی ان لوگوں کو خلت ملت کر رکھا جارہا ہے اتنا ہی نہیں کورنٹائن سنٹر میں سیکیورٹی گارڈ نہیں ہونے کے باعث لوگ گھر چلے جاتے ہیں بازاروں میں گھومتے نظر آتے ہیں جس کے سبب عام لوگوں میں دہشت ہے جبکہ ضلع میں بیماری پھیلنے کا خدشہ منڈلا رہا ہے جوکی بلاک مرکز میں واقع کسان کالج اور پلس ٹو ہائی اسکول میں بنے کورنٹائن سنٹر میں ضلع انتظامیہ کی بے ضابطگی اور لاپرواہی کو لیکر یہاں کے لوگوں میں کافی ناراضگی اور غصہ ہے لوگوں نے شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ضلع انتظامیہ کورنٹائن سنٹر میں سیکیورٹی گارڈز کو تعینات کرے ورنہ کورنٹان سنٹر سے کورنٹائن کئے گئے لوگوں کو ان کے گھروں کو بھیج دیا جائے کیونکہ اس طرح کورنٹائن سنٹر میں رکھنا بے سود ہے وہیں کورنٹائن کئے گئے لوگوں نے بتایا کہ کورنٹائن سنٹر سہولیات کی بے حد کمی ہے جسے لیکر گزشتہ روز لوگوں نے پلس ٹو ہائی اسکول میں جم کر ہنگامہ مچایا