یہ عبرت کی جا ہے محض حادثہ نہیں

123

سشانت سنکھ راجپوت کی حادثاتی موت باعثِ رنج و تکلیف ہے، مگر اِس موقع پر یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہو گئی، کہ مال و دولت کی فراوانی کی کوئی حیثیت نہیں۔۔۔۔۔۔ بنگلہ و گاڑی کی کثرت کی کوئی وقعت نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ شہرت و عزت کی بلندی کی کوئی منزلت نہیں۔۔۔۔۔۔ عیش وعشرت بھری کی زندگی کی کوئی معنویت نہیں۔۔۔۔۔ حسن و جمال کی حسین زیبائش اور دکش رعنائی کی کوئی اصلیت نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ نام و نمود کی معراج کی کوئی اہمیت نہیں۔۔۔۔۔
جب تک ذہن فکرِ جہاں سے آزاد نہیں۔۔۔۔۔۔۔ خیالات غم دوراں سے خالی نہیں ۔۔۔۔۔۔ حواسِ انسانی ذہنی اذیتوں سے دور نہیں ۔۔۔۔۔۔ دل کو اطمنان حاصل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ قلب کو سکون میسر نہیں۔۔۔
تو یاد رکھئے گر دل کے سکون کی تلاش ہے، تو ایسے عالم رب العالمين کی ہی بارگاہ ہے ۔۔۔۔۔ مالکِ کون ومکان کی ہی درگاہ ہے ۔۔۔۔۔۔ خالقِ ارض و سماں کی ہی اجتماع گاہ ہے۔۔۔۔۔۔کہ اسی کی یاد سے دل کو سکون ملتا ہے، اور اندرونِ قلب کو راحت کے ساماں نصیب ہوتے ہیں ۔

جیسا کہ فرمایا گیا ” اَلَا بِذِکۡرِ اللہِ تَطۡمَئِنُّ الۡقُلُوۡبُ ”  یعنی مالکِ کن نے مشیت کے چاک پر جب پیکر خاکی کو تیزی سے گھمایا ، تم اس کے حسیں پیکر میں ایسا نازک سا ٹکڑا، کہ اگر جہاں کوئی شیی اس ٹکڑے کو طمانیت بخش سکتی ہے، تو وہ صرف اور صرف ذاتِ مالک کن کی یاد ہی ہے، اس کے سوا کچھ بھی نہیں ۔
کیوں کہ جب اس کی یاد ہوگی ، تو ہزار آرائش وآلائش میں سجدہ شکر کے لئے جبینِ نیاز خم ہوگی، اور اسی طرح لاکھ ابتلاء و آزمائش میں دامنِ صبر درازی ہوگی ، جنت کی بے شمار نعمتوں سے امیدیں وابستہ ہوں گی، اور جہنم کی آگ کی شدید اذیتوں کا خوف چھایا ہوگا ، اور پھر یہی خوف و رجا کے امتزاجی حسین لمحات انسان کو مکمل طور پر رب کی مرضی پر راضی رکھیں گے ۔

4224?fbclid=IwAR3vI9bIpTq89ma0JWjVWOq3RnAachyPrF3ypdAsuF5EgRMEwBnir8th0nU