جمعرات, 6, اکتوبر, 2022
ہوممضامین ومقالاتہندوستان کی دفاعی قوت میں اضافہ

ہندوستان کی دفاعی قوت میں اضافہ

مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ پھلواری شریف پٹنہ

 ہندوستان کو چین نے تیزی سے آنکھ دکھانا شروع کر دیا ہے اس کی وجہ سے سرحد پر تناؤ میں دن بدن اضافہ ہوتا جا رہا ہے، پڑوسی ملک پاکستان کے ساتھ اس کے رشتے کبھی بھی استوار نہیں رہے، جس کے نتیجے میں کئی جنگیں ہندوپاک کے درمیان ہو چکی ہیں، اور اب بھی سر حد پر ہمارے جوان ملک کی حفاظت کرتے ہوئے اپنی جان سے ہاتھ دھو رہے ہیں، ایسے میں ہندوستان کی دفاعی قوت کا مضبوط ہونا انتہائی ضروری تھا۔لڑاکو طیارہ رافیل کے باوجود ضرورت اس بات کی تھی کہ ہمارے پاس دور تک مار کرنے اور دشمنوں کے ہوائی حملوں کا منہہ توڑ جواب دینے کے لیے ایسے میزائیل ہوں جو دور تک اپنے نشانے تک پہونچنے کی صلاحیت رکھنے والے اور دشمنوں کے میزائیل کو نشانے تک پہونچنے سے قبل ہی خاکستر کر دیں، اس سلسلے میں ہندوستان نے روس سے ایک معاہدہ کیا تھا، جس کی مخالفت امریکہ کی جانب سے ہو رہی تھی، ہندوستان نے اس مخالفت کی پرواہ کیے بغیر روس سے میزائیل کو مار گرانے والا ایس۴۰۰ایر ڈیفنس میزائل سسٹم کو حاصل کرنے میں  کامیابی حاصل کی ہے ، ہندوستان نے انتالیس (۳۹) ہزار کروڑ روپے میں اس سسٹم کو حاصل کیا ہے ، اس سسٹم کی بڑی خوبی یہ ہے کہ ایک ساتھ چھتیس(۳۶) لڑاکو طیارے گرا سکتا ہے ، یہ چھ سو کلومیٹر دور تک آنے والے حملہ آورطیارے اور میزائیل کو گرانے کی صلاحیت رکھتا ہے، تیس کلو میٹر دور تک نشانہ لگا سکتا ہے، ۸-۴؍ کلو میٹر فی سکنڈ کی رفتار سے یہ حملہ کرتا ہے، اس میں نصب بارہ گن ایک ساتھ تین تین نشانوں کونیست ونابود کر سکتا ہے، اس میزائل کی صلاحیت پاکستان اور چین میں متعین فضائی دفاعی سسٹم سے دو گنی ہے ، اس سسٹم کے حصول سے خطے میں طاقت کا توازن قائم ہوگا، اور ہماری ہوائی افواج کے حوصلے بلند ہوں گے، اس لیے اس سسٹم کے حصول پر حکومت لائق ستائش ہے، اے پی جے عبد الکلام نے کہا تھا کہ صلح کی میز پر بھی طاقتور ہونا ضروری ہے، ورنہ کمزوروں کی کوئی سننے کے لیے تیار نہیں ہوتا، اسی احساس کے ساتھ عبد الکلام نے ’’اگنی‘‘ ملک کو فراہم کرایا تھا اور اب اسی احساس کے ساتھ یہ نیا میزئیل سسٹم ہماری فضائی طاقت کا حصہ بنا ہے۔

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے