ہریانہ کے مشہور خاندان حافظاں کے چشم وچراغ حافظ مسعود پپلی مزرعہ کا انتقال

103

ہریانہ کے مشہور(نوائے ملت نیوزمبارک میواتی آلی میو) خاندانِ حافظاں کے چشم و چراغ و حضرت مولانا انیس صاحب استاد حدیث و تفسیر جامعہ بیت العلوم کے برادر اکبر حضرت الحاج حافظ مسعود صاحب پپلی مزرعہ کا کل (23 ستمبر 2020ء) مختصر علالت کے بعد انتقال ہو گیا،مرحوم ایک طویل عرصے سے شوگر کے مریض تھے، بروز اتوار اچانک شوگر میں اضافہ ہونے کی وجہ سے انہیں یمنا نگر کے ایک پرائیوٹ اسپتال میں داخل کرایا گیا جہاں بدھ کے روز صبح پانچ بجے انہوں نے اپنی زندگی آخری سانسیں لیں اور ہمیشہ کیلئے اپنے خالق حقیقی سے جا ملے، آپ کی عمر تقریباً 60 برس تھی
انجمن اصلاح میوات کے صدر مولانا ناصر حسین زکریا اٹاوڑی کے سسر حضرت الحاج حافظ مسعود صاحب کا تعلق ایک ایسے خاندان سے ہے جس میں صدیوں سے خاندان کے اکثر افراد حفاظِ قرآن چلے آ رہے ہیں، اسی وجہ سے اس خاندان کو خاندانِ حافظاں کہا جاتا ہے،مولانا ناصر حسین زکریا اٹاوڑی نے بتایا کہ آپ کے آباء و اجداد کا تعلق عرب کے مشہور قبیلہ قریش کی شاخ بنو امیہ سے ہے جو اموی دور میں اولا فلسطین کے تاریخی شہر اریحا میں آباد ہوئے اور پھر محمد بن قاسم ثقفی کی قیادت میں سندھ فتح کیا،فتحِ سندھ کے بعد یہ خاندان پنجاب میں ہی آباد ہو گیا اور آج بھی اپنی دینی ذمیداریوں کو بخوبی نبھا رہا ہے،آپ کے دادا حضرت حافظ شریف صاحب حضرت شاہ عبد القادر رائے پوری،شیخ الاسلام حضرت مولانا حسین احمد مدنی اور مولانا خلیل احمد سہارنپوری کے نہایت ہی معتمد و قریبی تھے،انہوں نے تقسیمِ ہند کے بعد رونما ہونے والے پر آشوب حالات کے بعد از سر نو شمالی ہریانہ میں اہل اسلام کو آباد کرنے میں بھی ایک اہم کردار ادا کیا، مولانا ناصر حسین زکریا اٹاوڑی نے بتایا کہ پپلی مزرعہ و گرد و نواح کے علاقہ جات میں پائی جانے والی دینی چہل پہل اور مدرسہ بیت العلوم پپلی مزرعہ کی تاسیس میں اس خاندان کا ایک کلیدی کردار ہے،
حضرت الحاج حافظ مسعود صاحب کے پسماندگان میں چھ بیٹیاں اور دو بیٹے ہیں، بڑا بیٹا مولانا حافظ محمد مصطفی مدرسہ اسلامیہ نانکہ(سہارنپور) میں عربی ادب و فقہ کے استاد ہیں جبکہ دوسرا بیٹا حافظ محمد مرتضیٰ زراعت و کاشتکاری کے امور انجام دیتا ہے،آپ کے جنازے میں ایک جم غفیر نے شرکت فرمائی، تدفین بعد از نماز عصر ہوئی، نماز جنازہ آپ کے پھوپھی زاد بھائی و مدرسہ احیاء العلوم پٹلوکر کے مہتمم حضرت مولانا محمد طاہر صاحب نے پڑھائی،جنازے میں قرب و جوار کے ایک جم غفیر نے شرکت فرمائی، مدرسہ کی مسجد سے متصل اپنے خاندانی قبرستان میں آپ کو دفن کیا گیا،حافظ مسعود صاحب کی وفات پر میوات کے اکثر لوگوں نے اظہار تعزیت پیش کرتے ہوئے دعائے مغفرت فرمائی جیسے ہی مولانا ناصر حسین زکریا اٹاوڑی کے ذریعہ سوشل میڈیا پر یہ خبر شائع ہوئی تو لوگوں نے حافظ صاحب کے لئے ایصال ثواب کیا، میواتی تہذیب و ثقافت گروپ کے سربراہ مولانا حکیم الدین اشرف اٹاوڑی سمیت سبھی ممبران نے حافظ صاحب کے انتقال پر تعزیت پیش کی اور دعائے مغفرت فرمائی،میوات لیٹیسٹ گروپ، میواتی نیوز ہسٹری اینڈ کلچر گروپ کے سبھی ممبران نے حافظ مسعود صاحب پپلی مزرعہ کے لئے قرآن خوانی کرکے ایصال ثواب کیا گیا