ہاں مجھے یہودی قوم سے نفرت ہے!  تحریر! جاوید اختر بھارتی

92
ہاں مجھے یہودی قوم سے نفرت ہے!
تحریر! جاوید اختر بھارتی
  یہودی قوم مغضوب عنداللہ تو ہے ہی مبغوض عند الناس بھی ہے ،ظلم و جبر ،سفاکی وبربریت ،طغیان و سرکشی، احسان فراموشی و نافرمانی ،حرام خوری وبدمعاشی، عیاری و مکاری ،فسادوفتنہ پروری،لامحدودحرص ولالچ اور وہ تمام خصائل قبیحہ جو کسی قوم یا جماعت کے افراد میں متفرق طور پر پائی جاتی ہیں اس خنزیر صفت قوم کے ہر فرد میں مجموعی طور پر پائی جاتی ہیں ان کا ہر فرد تنہا تنہا ان خصائل رذیلہ کا مجموعہ ہوتا ہے
         مجھے اس بات کا کامل یقین ہے کہ تقریباً ایک لاکھ چوبیس ہزار انبیاء کرام اور کروڑہا کروڑ مصلحین واولیاء اپنی داعیانہ کوششوں اور اصلاحی محنتوں سے ان خصائل قبیحہ کو روئے زمین سے مٹا سکتے تھے اور اس دنیا کے باسی ان قباحتوں سے نابلد ہوسکتے تھے اگر یہ خبیث قوم دنیا سے مٹ جاتی اسی ملعون شیطانی ٹولے نے ہمیشہ افساد فی الارض بعد الاصلاح کے جرم کا دروازہ کھولا اور ان خصائل رذیلہ کو اس دنیا میں زندہ رکھا اور اسے پھیلایا بھی
          یہی وجہ ہے کہ یہ قوم دنیا میں جہاں بھی گئی اور جن دیگر اقوام کے درمیان اس نے سکونت اختیار کی اپنی انہیں ناپسندیدہ خصلتوں کے باعث لوگوں کے غیض وغضب اور نفرت و حقارت کا شکار ہوئی حتیٰ کہ ان ملعونوں سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے لوگوں کو مجبوراً ان پر ظلم کرنا پڑا
  نازی جرمنی کا مشہور تانا شاہ ایڈولف ہٹلر بھی جو اس قدر سفاک قاتل بنا اس کو اس گناہ تک انہیں کی بدمعاشیوں نے پہونچایا
       ایک مرتبہ ہٹلر سے اس کے ایک دوست نے پوچھا کہ تمہیں یہودیوں سے اتنی نفرت کیوں ہے یہ اس وقت کی بات ہے جب کہ ابھی وہ جرمنی کا چانسلر نہیں بنا تھا مگر یہودیوں کے خلاف اس کی نفرت انگیز باتوں سے لوگ واقف تھے ہٹلر نے اس دوست سے کہا کہ اگر تم اپنے سوال کا جواب چاہتے ہو تو کل میرے ساتھ بازار چلو
دوسرے دن اس نے اپنے دوست کو ساتھ لیا اور کسانوں کا لباس پہن کر اور انہی جیسا حلیہ بنا کر بازار کی طرف چل دئیے بازار پہونچ کر ایک کراکری کی دوکان میں گھسے دوکان کا مالک ایک یہودی تھا ہٹلر نے اس یہودی دوکاندار سے کپ دکھانے کی فرمائش کی ،اس دوکاندار نے ایک عمدہ قسم کا کپ نکال کر کاؤنٹر پر رکھ دیا اتفاق سے اس کپ کو پکڑنے والی گھنڈی ہٹلر کے بائیں ہاتھ کی طرف تھی ہٹلر نے اس کپ کی قیمت دریافت کی اس دوکاندار اس کی واجب قیمت بتائی
    ہٹلر نے اس کپ کی خوب تعریفیں کی اور اپنی پسندیدگی کا اظہار کیا مگر خریدنے سے معذرت کرلی دوکاندار نے جب اس کی وجہ پوچھی تو ہٹلر نے کہا کہ یہ خوبصورت کپ میرے مقصد کا اس لئے نہیں ہے کہ یہ بائیں ہاتھ سے استعمال کے لئے بنایا گیا ہے اور کھانے پینے کے لئے بائیں ہاتھ کا استعمال ہماری مذہبی تعلیمات کے خلاف ہے اگر تمہارے پاس دائیں ہاتھ سے استعمال ہونے والا کپ ہو تو وہ دکھاؤ دوکاندار اندر گیا اور اسی جیسا دوسرا کپ لا کر سامنے اس طرح رکھا کہ اس کی گھنڈی ہٹلر کے دائیں طرف تھی ہٹلر نے جب اسے دیکھا تو خریدنے کی ضرورت سے زیادہ دلچسپی دکھائی اور اس کی قیمت پوچھی ،دوکاندار نے اس کپ کی قیمت پہلے والے کپ کی قیمت سے دوگنی بتائی ہٹلر زیادہ قیمت کا بہانا بنا کر دوکان سے نکل گیا دوکاندار لاکھ اصرار کیا اور واپس بلانا چاہا مگر ہٹلر نے اس کی ایک نہ سنی
باہر نکل کر وہ دوست کی طرف متوجہ ہوا اور اس کو مخاطب کرکے کہا کہ تم نے اس یہودی کی فطرت دیکھی کہ اسی کپ کو گھما کر وہ ہمیں یہ بتا سکتا تھا کہ اسے دائیں ہاتھ سے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے مگر جب اس نے دیکھ لیا کہ ہم بھولے یا بیوقوف ہیں تو اس نے ہماری بیوقوفی سے ناجائزفائدہ اٹھانا چاہا اور دوگنی قیمت وصولنا چاہا یہی اس قوم کی فطرت ہے اس قوم کی حرص اور لالچ کی کوئی انتہا نہیں ہے یہ قوم جہاں جاتی ہے وہاں کے لوگوں کی سادہ لوحی کا پوری عیاری و مکاری سے فائدہ اٹھاتی ہے اور آہستہ آہستہ تمام وسائل پر قبضہ جما کر لوگوں کا استحصال شروع کرتی ہے
اسی لیے میں اس قوم سے نفرت کرتا ہوں ،،،
آج جس قضیہ فلسطین پر پوری امتِ مسلمہ خون کے آنسو رورہی ہے اس قضیے کی ابتدا بھی کچھ اسی مکاری و عیاری سے ہوتی ہے
سن 1948 سے قبل جنگ عظیم دوئم کے بعد جب پورا فلسطین بریطانیہ کے زیرِ نگیں تھا اور وہاں کی اکثریت عرب مسلمانوں کی تھی عالمی طاقتوں نے یہودیوں کو ان کے آبائی وطن کا خواب دکھا فلسطین میں آباد ہونے کی ترغیب دی چنانچہ دنیا کے مختلف ممالک سے یہودی وہاں آکر آباد ہونے لگے اور منھ مانگی قیمت دیکر عربوں سے ان کی زمینیں خریدنے لگے چونکہ ان کے پاس دنیا بھر کا سرمایہ تھا دولت کی ان کے پاس کمی نہیں تھی اور پیسوں کی لالچ میں عربوں نے نتائج سے بے پرواہ ہوکر اپنی زمینیں ان کے ہاتھ فروخت کرنی شروع کیں جب اس سرزمین پر یہودیوں کی ایک معتدبہ آبادی ہوگئی تو اقوام متحدہ کے ذریعہ اسرائیل کے نام سے ایک ملک کی ناجائز ولادت کا اعلان کر دیا گیا اور یہ منحوس و ظالم ملک آج تک جملہ عرب ممالک اور پوری امتِ مسلمہ کے لئے ایک ایسا مسئلہ بنا ہوا ہے کہ اس سے نجات کی کوئی صورت فی الحال نظر نہیں آتی
یہودی اپنے مفاد کے لئے ہر روپ اختیار کرلینے والی قوم ہے ، ظاہری طور پر ہر مذہبی لبادہ اوڑھ لینے والی قوم ہے، خانقاہ، درسگاہ سے ہوتے ہوئے محراب و منبر تک پہنچ کر ظاہر میں دین کے مبلغ داعی بننے والی اور حقیقت میں یہودی مشن کو تقویت دینے والی قوم ہے جب سلطان صلاح الدین ایوبی بیت المقدس کی فتح کرنے کے لئے لڑ رہے تھے تو ایک شخص ایسی تقریریں کرتا تھا کہ لوگ متاثر ہو جایا کرتے تھے صلاح الدین ایوبی کے جاسوس نے بتایا کہ ایک عالم ہے جو بڑی پرمغز تقریریں کرتا ہے وہ کہتاہے کہ جنگ و جدال اور قتل و قتال سے کچھ نہیں ہونے والا ہے ہماری آبادیاں کم ہو جائیں گی کتنی گودیاں اجڑ جائیں گی بہتر ہے کہ جو جس حال میں ہے اسے رہنے دیا جائے صلاح الدین ایوبی نے اس سے ملاقات کی اور کہا کہ برتاؤ بیت المقدس فتح کرنے کا وہ کونسا راستہ ہے جس مسلمانوں کا کم سے کم نقصان ہو اس نے کہا صرف دعا یہ سنتے ہی صلاح الدین ایوبی کا چہرہ غصے میں سرخ ہوگیا وہ سمجھ گئے کہ یہ شخص محاذ پر لڑنے والے یہودیوں سے زیادہ خطرناک ہے آپ نے خنجر نکالا اور اس کی انگلی کاٹ دی وہ چیخنے اور چلانے لگا آپ نے کہا کہ اپنی حقیقت بتا ورنہ گردن بھی کاٹ دوں گا،، واضح رہے کہ یہودیوں کو عربی زبان بولنے میں بھی مہارت کل بھی تھی اور آج بھی ہے اسی وجہ سے یہ دھوکا دینے میں کامیاب ہوجاتے ہیں یہ اتنی نمک حرام اور احسان فراموش قوم ہے کہ جب ہٹلر یہودیوں کو چن چن کر قتل کر رہا تھا تو جب ادھر ادھر مظاہرہ ہونے لگا اور ہٹلر پر جب کافی دباؤ پڑا تب بھی ہٹلر نے یہی کہا تھا کہ میں دنیا کے دباؤ سے پیچھے ہٹنے والا نہیں ہوں بلکہ دنیا کے سامنے اس حرام خور قوم کا چہرہ بے نقاب کرنے کے لئے چھوڑ رہا ہوں اور بہت جلد دنیا ایک بار پھر دیکھے گی کہ یہودی کتنی ظالم و بے رحم و احسان فراموش قوم ہے،، یہ قوم سود میں یقین رکھنے والی ہے، زنا کو فروغ دینے والی ہے، شراب نوشی کو بڑھاوا دینے والی ہے، اسلام اور پیغمبر اسلام سے بغض رکھنے والی ہے، مسلمانوں دشمنی رکھنے والی ہے اور مسلمانوں کی نسل کشی کا منصوبہ بنانے والی ہے،، ہٹلر کی بات آج صحیح ثابت ہوئی یہودیوں کو جس قوم نے پانی پلایا اسی قوم کو یہودی آج پیاسا مار رہے ہیں، جس نے کھانا کھایا اسی کو آج بھوکا مار رہے ہیں، جس نے سر چھپانے کے لئے جگہ دی اسی کے مکانات کو آج بلڈوزر اور بموں سے ڈھارہے ہیں، جس نے قتل ہونے سے بچایا اسی کو آج یہ  قتل کر رہے ہیں ،، فلسطین میں ظلم کا بازار گرم ہے آسمان کی طرف نظریں اٹھتی ہیں تو ہوائی جہاز کے ذریعے بموں کی برسات ہورہی ہے سرزمین غزہ آج مظلوم مسلمانوں کے خون سے لالہ زار ہے آج یہ ثابت ہوگیا کہ دنیا کی سب سے بہادر قوم فلسطینی مسلمان ہیں اسرائیل کے ساتھ اور یہودیوں کے ساتھ امریکہ کھڑا ہے اور اسرائیل امریکہ کی ہی ناجائز اولاد ہے اسی لئے جو بائیڈن کا اصلی چہرہ بے نقاب ہوگیا اور اس کی رگوں میں یہودیت کا خون آجکل بڑی تیزی کے ساتھ دوڑنے لگا ہے مسلم ممالک ابھی تک مذمت کررہے ہیں، تشویش کا اظہار کررہے ہیں ان کی غیرت مرچکی ہے ضمیر مردہ ہوچکا ہے اسی لئے انہیں یہ احساس ہی نہیں ہوتا ہے کہ ڈیڑھ ارب مسلمانوں کے لئے نوے لاکھ یہودی درد سر بنے ہوئے ہیں لیکن بالخصوص عرب ممالک عیش پرستی کی نیند سو رہے ہیں اور سمجھ رہے ہیں کہ خاموش رہ کر ہماری حکومت برقرار رہے گی تو یہ ان کی بہت بڑی بھول ہے ،، اگر مسجد اقصیٰ مسمار ہوئی اور فلسطین پر اسرائیل کا قبضہ ہوا تو عرب ممالک کا وجود بھی خطرے میں پڑ جائے گا اور امریکہ یہی چاہتا ہے لیکن افسوس مسلم حکمرانوں کی آنکھیں نہیں کھل رہی ہیں آج فلسطین کا بچہ بچہ چیخ رہا ہے کہ ائے مسلم حکمرانوں جاگو اب سے بیدار ہو جاؤ یہودیت کا پنجہ مروڑ دو اور بیت المقدس مکمل طور پر آزاد کرالو اگر آج بھی تم نہیں بیدار ہوئے تو تاریخ تمہیں کبھی معاف نہیں کرے گی اور کل میدان محشر میں اللہ و رسول کے سامنے کیا منہ دکھاؤ گے-