ہاتھرس کی بیٹی کو انصاف دلانے کے لئے نکالا گیا کینڈل مارچ!

50

سیتامڑھی (شکیب الاسلام) باجپٹی بلاک کے بری پھلوریہ میں شاہی جامع مسجد چوک سے لیکر مولانا آزاد چوک تک ہاتھرس کی دلت بیٹی کو انصاف دلانے کے لئے کینڈل مارچ نکالا گیا۔

ہاتھرس کی بیٹی کو انصاف دلانے کے لئے نکالا گیا کینڈل مارچ!
جس میں بہت سے نوجوان شریک رہے اور حکومت سے مجرموں کو سخت سزا دینے کی مانگ کرتے رہے کینڈل مارچ نکال رہے لوگوں کا کہنا تھا کہ اتر پردیش میں اس وقت جرائم عروج پر ہیں اور سرکار جرائم، قتل، ریپ اور دیگر جرائم کو روکنے کے لئے کوئی اقدام نہیں کررہی ہے جس سے مجرموں کے حوصلے مزید بلند ہوتے ہیں،

ابھی ہاتھرس معاملے میں ہی پورا ملک سراپا احتجاج تھا کہ کئی اور مقامات سے بھی اسی طرح کی درناک خبریں موصول ہوئی بلرامپور کے بعد اب کانپور دیہات سے بھی ایک درناک حادثے کی خبر آئی ہے جہاں کئی دنوں غائب رہنے کے بعد ایک لڑکی کی لاش ۴/حصوں میں الگ الگ ملی،
در اصل یوپی اور اکثر جگہوں کا حال ہے کہ قانونی سشٹم بری طرح فیل ہوچکا ہے مجرموں کو سزا دینے کے بجائے انکے حق میں ریلیاں نکالی جاتی ہے اور جانچ کے نام پر مجرموں کو بچانے کے لئے بے جا وقت خرچ کیا جاتا ہے،
سیف الاسلام مدنی نےمرکزی حکومت سے اپیل کی ہے کہ اس طرح کے معاملات اور جرائم کے لئے بہت جلد ایسا قانون بنایا جائے جس میں بلا تفریق مذہب ایسا جرم کرنے والوں کو ۳/سے ۴/ دن کے اندر تحقیقات مکمل کرکے، سزائے موت دینی چاہئے،تاکہ دیکھنے والوں کو عبرت ہو اور ایسا کرنے کی ہمت لوگوں کے اندر سے کم ہو!
اس موقع پر خواص طور سے سیف الاسلام مدنی مولانا محمد ذکی محمد احمد علی محمد عفان عبدالصمد محمد آصف محمد جاوید محمد سمیع اللہ محمد اکمام ساجد انور محمد شیفی محمد شاہنواز محمد شہباز موجود رہے !