” وینٹی  لیٹر ”  (افسانہ از قلم :۔ شیبا کوثر ،(برہ بترہ آرہ ،بہار ) انڈیا ۔

92

” وینٹی  لیٹر ”  (افسانہ
از قلم :۔ شیبا کوثر ،(برہ بترہ آرہ ،بہار ) انڈیا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔،۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کی اطلا عات کے مطابق ملک بھر میں ایس او پیز  کی دھجیاں اڑا ئی جا رہی ہیں لوگ عید کی خریداری میں مشغول ہیں ۔کندھے سے کندھا ملائے مرد و زن مارکیٹس میں اپنی اپنی پسند کی ایشیا ء خریدنے کے لئے پر جوش دیکھائی دے رہے ہیں ۔کرونا نے گھمبر صورت حال اختیار کر لی ہے ۔۔۔۔۔۔۔اگلے چو بیس گھنٹوں کے دوران یہی صورتحال رہی تو مکمل لاک ڈاؤن متو قع ۔اف میڈیا والے بھی نہ کیا عجیب و غریب خبریں نشر کر رہے ہیں ۔۔۔۔۔انسانی ذہن کو بالکل مریض بنا کر رکھ دیا ہے ۔مجال ہے کوئی کام کی خبر ہو جو چینل بدلو( کو یڈ 19) کی وجہ سے ساٹھ  جاں بحق 250 لوگوں کا ٹیسٹ مثبت آنے پر ہسپتال منتقل کر دیا ہے ۔۔۔۔۔۔افففففف۔ ۔۔۔۔۔۔۔یا اللّه رحم !۔۔۔۔زچ ہو کر اس نے ریمو ٹ صوفے پر پھینکتے ہوئے زونیرہ کو آواز لگائی ۔۔۔۔۔۔زونیرہ زونیرہ جلدی کرو ابھی تک ناشتہ نہیں بنا تمہارا ،مجھے دیر ہو رہی ہے یار،بس تیار ہے ۔۔۔۔۔۔حذیفہ آپ آجائیں ٹیبل پر ۔۔۔۔۔۔۔کرسی پر بیٹھتے ہوئے اس نے زونیرہ کو مخاطب کیا ۔۔۔۔۔بیوی یار! آج شام چار بجے تیار رہنا میں آفس سے جلدی آجا ؤں گا پھر شاپنگ پر چلیں گے ۔۔۔۔۔۔لیکن حذیفہ !۔۔۔۔۔۔آپ نے ابھی خبر یں نہیں سنی باہر کے حالات تشو یشناک ہیں ۔۔۔۔۔ان کو چھوڑو نیوز چینل والوں کو تو بس کوئی بھی موضوع دے دو ان کا تو کام ہے بات کا بتنگڑ بنانا۔اسی سےتو ان کا چولہاجلتا ہے۔۔۔۔۔۔لیکن۔ ۔۔۔۔۔۔لیکن ویکن کچھ نہیں تم بس تیار رہنا ۔۔۔۔۔۔اوکے میں جارہا اللّه حافظ۔اچھا ناشتہ تو صحیح سے کریں ، میں نے کر لیا دیر ہو رہی ہے یار  اللّه حافظ،اپنا خیال رکھنا ۔۔۔۔۔۔وہ بیگ اٹھائے ہوئے دروازے کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔کرونا کرونا !۔۔۔۔۔۔۔یہ کون سا وائر س ہے ؟کونسی بیمار ی ہے ۔۔۔۔۔بیماری ویما ری کوئی نہیں ہے بس عوام میں خوف و ہرا س کا ماحول پیدا کر رہی ہے حکومت ۔۔۔۔۔۔۔آج پھر آفس میں شفیق علی اور حذیفہ رحمٰن کے زیر بحث یہی موضوع تھا ۔پچھلے کئی دنوں سے یہ دونوں اس موضوع پر الجھتے آ رہے تھے ۔۔۔۔۔ایک طرف حذیفہ رحمٰن جو کرونا کے وجود سے انکار کر رہا تھا اور دوسری طرف شفیق علی جو اس کو زچ کرنے کے لئے ہمہ وقت یہ موضوع چھیڑ دیتا ۔۔۔۔۔۔وقتاً فوقتاً ان دونوں میں کرونا کو لے کر جنگ جاری رہتی ۔شفیق اسے سمجھاتا رہتا کبھی دلائل سے کچھ مذاق سے ۔۔۔۔۔۔یار حذیفہ اس حقیقت کو تسلیم کرو ۔۔۔۔۔۔کرونا انگزسسٹ کرتا ہے یہ جان لیوا بیماری ہے پرہیز ہی اس کا  واحد علاج ہے لیکن وہ حذیفہ ہی کیا جو مان جائے ۔آج شفیق نے اسے پھر لیکچر دیا ۔میرا یار میرے جان عزیز دوست  سمجھنے کی کوشش کرو یہ جو تم نے ٹوپی ڈرامہ ٹوپی ڈرامہ کی رٹ لگا رکھی ہے،ایسا کچھ بھی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔خدا نخواستہ تم یا میں اس حالت سے گزریں تو احساس ہوگا کہ واقعی ہے یا نہیں ؟جو اس اذیت سے دو چار ہے وہی اس درد کو محسوس کر سکتے ہیں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار شفیق اس موضوع کو یہاں ختم کرو ۔
اوکے یار ! ویسے بھی صبح صبح میں بھی اس بحث میں نہیں پڑنا چاہتا ۔۔۔۔۔۔جاتے جاتے اسے پھر شرارت سوجھی ۔۔۔۔حذیفہ! جو اب اپنے ما نیٹر کی ا  سکر ین  پر نظریں جما ئے کام میں مصروف ہو گیا ،تبھی شفیق کے مخاطب کرنے پر نظریں اٹھا کر دیکھتا ہے تو وہ ٹیبل پر رکھے ماسک کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہتا ہے۔۔۔۔۔اچھا یار  بات سنو ۔۔۔۔۔۔۔!ایس ا و پیز  کو فالو کرو ! آج وہ بھر پور شرارت کے موڈ میں تھا کہ حذیفہ کو تنگ کرے ۔۔۔۔۔۔اس پر حذیفہ ایک بار پھر بھڑک اٹھا ۔کونسی ایس او پییز ۔۔۔۔۔کیسا ماسک ۔۔۔۔۔۔اب یہاں کہاں کرونا آگیا ۔۔۔۔۔جا نا یار اپنے کیبن میں ۔۔۔۔۔۔۔ہوں بڑا آیا تو مجھے ایس او پیز  بتانے والا ۔۔۔۔۔۔۔حذیفہ ماسک اٹھائے ہوئے نجانے کیا کیا بڑ بڑ ا رہا تھا جس پر شفیق نے زوردار قہقہ لگایا اور واپس اپنے کیبن میں آ کر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔!
بازار میں شا پنگ کرتے ہوئے وہ دونوں بہت خوشگوار موڈ میں تھے اور ایک شاپ پر لوگوں کا ہجوم تھا ۔۔۔۔۔دکان کے باہر بڑے بڑے بینر  آویزاں تھے ۔”سیل سیل ۔۔۔۔۔ہائے ون گیٹ ون فری “۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی اس و ن میں آگئے ۔۔۔۔جیسے شوز  خرید نے کے لئے شاپ میں داخل ہونے گاڈ نے سینٹا ئیز آگے بڑھا تے ہوئے کہا سر ماسک پلیز ۔۔۔۔۔۔اف یار :یہ کیا مصیبت ہے اب بندہ کھلی ہوا میں سانس بھی نہ لے ۔۔۔۔اس نے ماسک آگے بڑھاتے ہوئے کہا سر سوری اس کے بغیر آپ اندر نہیں جا سکتے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ایک غصے بھری نگاہ گا ڈ پر ڈالی اور ماسک لے لیا ۔۔۔۔۔رات واپسی پر باہر ایک اچھے ریسٹور ان  پر کھانا کھایا اور واپس آگئے۔
ہسپتال میں ا یمبولینس کے سا ئر ن لوگوں کی بھیڑ ۔۔۔۔۔شورو غل، کہیں سسکیاں ،آ ہیں ،چیخ و پکار ۔۔۔۔۔۔۔اکھڑ تی سانسیں ،دم توڑ تی روحیں ۔۔۔۔۔۔۔نجانے کتنی ما ؤں کی گود اجڑ گئی ۔۔۔۔۔کہیں آہ و بکا ہمارے بچوں کو چیک کر لو ۔۔۔۔۔ تو کہیں ما ں کو بچانے کیلئے ہاتھ جوڑتے بچے ۔۔۔۔۔دم توڑ تے ننھے پھول ،جوان بیٹے کی لاشیں جن کا آخری دیدار بھی والدین کو نصیب نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔جان سے جاتا ہوا جوان بھائی،جو کتنوں کی امید کا مرکز تھا ۔۔۔۔۔۔جوان بہنیں ،جوان بھا بھی ،نظروں کے سامنے آن واحد کتنے سہاگ اجڑ گئے ۔۔۔۔۔کتنے چمن لٹ گئے ۔۔۔۔۔کہیں سسکتی بلکتی بیوا ئیں ۔۔۔۔۔۔کہیں سسکتے بلکتے معصوم بچے ۔۔۔۔جنہوں نے ایک ہی پل  میں اپنے والدین جیسے عظیم نعمت کو کھو دیا ۔۔۔۔۔کہیں باپ کی لاشوں کو کندھا دیتی کمسن بیٹیاں ۔۔۔۔۔۔آنکھوں کے سامنے اجڑ تے ہوئے چمن بستے ہوئے شمشان کا اشارہ تھے ۔۔۔۔۔۔آہ کتنے لوگ لاوارث دفنا ئے گئے کوئی کندھا دینے کو تیار نہ تھا ،انسانیت کے بھی رشتے ناتے دم توڑ گئے ۔کرونا وبا ءقہر بن کر ٹوٹا تھا ۔۔۔۔۔ڈاکٹر اور نر سسز  واحد سہارا تھے ۔۔۔۔۔جو جان کی بازی لگا کر اپنے فرض کو نبھانے کی کوشش کر رہے تھے وہی ہمدرد غمگسار اور مسیحا ۔۔۔۔۔یہی وہ واحد رشتہ تھا جو مرتے دم تک لوگوں کی جان بچانے کیلئے اپنی جان داؤ پر لگائے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔لوگ بےبس تھے وہ اپنے مال و متا ع یہاں تک کہ آج اپنی سانسیں بھی اپنے عزیز پیارو ں پر وار دینے کیلئے تیار تھے ۔۔۔۔۔ہا ئے یہ بےبسی ۔۔۔۔ہر طرف قیامت بر پا ہے ۔۔۔۔۔یہ سارا قیامت صغرا کا منظر  اس کی آنکھوں میں منڈ لا رہا تھا ۔۔۔۔۔حذیفہ جو آج ونیٹی لیٹر پر پڑا زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہا تھا ۔۔۔۔۔اور آنسو کی لڑ یا ں قطار در قطار اس کے چہرے کا طواف کر رہی تھیں ۔نجانے یہ ندا مت کے آنسو تھے یا درد کی کڑوا ہٹ ۔۔۔۔۔کسی اپنے سے بچھڑ نے کا دکھ ،یا شاید پچھتاوا ۔۔۔۔۔؟
(غیر مطبوعہ)۔