بدھ, 5, اکتوبر, 2022
ہوماعلان واشتہاراتنندنیاں پنچایت کےعلماء اور حفاظ کی مشاورتی نشست منعقد، کئی اہم فیصلوں...

نندنیاں پنچایت کےعلماء اور حفاظ کی مشاورتی نشست منعقد، کئی اہم فیصلوں کی منظوری

پاکیزہ سماج کی تشکیل کے لئے علماء،حفاظ اور ائمہ آگے آئیں: خالد انورپورنوی

نندنیاں پنچایت کےعلماء اور حفاظ کی مشاورتی نشست منعقد، کئی اہم فیصلوں کی منظوری_

پریس ریلیز،پورنیہ

آج جناب مفتی خالدانورپورنوی جنرل سکریٹری رابطہ مدارس اسلامیہ عربیہ بہار کی تحریک پر،سماجی ومعاشرتی اصلاح کے عنوان سے،جامع مسجد میرپور ہاٹ(پورنیہ) میں علماء اور حفاظ کی اہم نشست منعقد ہوئی،سماجی بگاڑ،نسلوں کی حفاظت،شادی،بیاہ کی غلط وناجائز رسومات جیسے موضوعات پربات چیت ہوئی اور اہم فیصلے لئے گئے_افتتاحی خطاب کرتے ہوئے جناب مفتی خالدانورپورنوی المظاہری نے کہا:سات سال سے چودہ،پندرہ سال کے بچے ہمارے برباد ہورہے ہیں،سگریٹ نوشی،تمباکو،ودیگر منشیات کے عادی ہورہے ہیں،گھروں میں بڑی بڑی بالغ بچیاں بن بیاہی بیٹھی ہیں،جہیز،بارات ودیگر شادی،بیاہ کی ناجائز رسومات نے غریب بچیوں کی شادی کو بڑا مشکل بنادیاہے،ایسے میں ضروری ہے کہ ہم سب ایک بیٹھیں اور ایک فیصلہ لے کر اس پر عمل پیراہوں،مٹینگ میں موجود علماء کرام اور حفاظ عظام نے بھرپور تائید کی اور ہر طرح سے معاونت کااعلان کیا،واضح رہے کہ سماجی ومعاشرتی اصلاح کے لئے نندنیاں پنچایت میں واقع جامع مسجد میرپور ہاٹ میں علماء کرام اور حفاظ کی یہ میٹنگ بلائی گئی تھی،میٹنگ بلانے والوں میں جناب مفتی عبدالغنی صاحب قاسمی جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء بیسہ بلاک پورنیہ،مولانا حماد کیفی قاسمی،مولانا نجم السحر اعظمی کے نام خصوصی طور پر قابل ذکر ہیں،میٹنگ میں مفتی مناظر حسن صاحب مظاہری ،جناب مفتی نظر الاسلام صاحب قاسمی، حافظ ثمر الحق صاحب شہریاوی، حافظ ابو حفص صاحب محصیل ،قاری نعمان صادق صاحب، حافظ شہباز صاحب و دیگرعلماء کرام اور حفاظ شریک ہوئے،اتفاق رائے سے فیصلہ لیاگیاکہ (1)سات سال سے چودہ سال تک جو بچے تعلیم سے دور ہیں،یاکسی طرح سے وہ بے راہ روی کاشکار ہیں،ان کو تعلیم سے جوڑنے کی کوشش کی جائے گی،میٹنگ میں موجود شرکاء کی یہ ذمہ داری ہے کہ کم ازکم ایک بچہ کی وہ ذمہ داری اٹھائیں،سب نے اس تجویز کی حمایت کی_ (2)شادی،بیاہ کی ناجائز اور غلط رسومات کے سلسلہ میں فیصلہ لیاگیاکہ(الف) لڑکی والوں کوپابند کیا جائے کہ لڑکی والوں کی طرف سے بھوج اور دعوت کااہتمام نہ کیاجائے،چونکہ اسلام میں لڑکی والوں کی طرف سے کسی طرح کے بھوج کاثبوت نہیں ہے،(ب)بارات کے رسومات سے بھی لوگوں کو بچانے کی کوششیں کی جائے،(د)دعوت ولیمہ کے بعد چومانہ کارواج بھی غیر اسلامی اور غیر انسانی ہے،اس سے بھی بچنے کی مہم چلائی جائے گی_اسی طرح نکاح کو آسان اور مسنون بنانے کی مہم چھیڑی جائے گی_ مذکورہ بالا تجاویز پر تمام شرکاء نے اتفاق کیا ،اور اخیر میں مفتی خالد انور پورنوی کی دعاء پر مجلس اختتام پذیرہوئی_

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے