جمعرات, 29, ستمبر, 2022
ہوماعلان واشتہاراتنفیس کالونی پٹنہ میں دعائیہ مجلس کا انعقاد

نفیس کالونی پٹنہ میں دعائیہ مجلس کا انعقاد

#حضرت مولانامحمدقاسم صاحب رحمۃ اللہ علیہ بانی جامعہ مدنیہ سبل پور پٹنہ؛بڑی شخصیت کے مالک تھے،اللہ نے انہیں کئی خوبیوں سے نوازا تھا،اللہ ان کی مغفرت فرمائے اور ترقی درجات سے نوازے،آمین،ان خیالات کااظہارکل ہندرابطہ مدارس اسلامیہ عربیہ دارالعلوم دیوبند کے ناظم عمومی حضرت مولانا شوکت علی صاحب قاسمی بستوی نے جناب مولانا محمد حارث بن مولانا محمدقاسم صاحب کی رہائش گاہ نفیس کالونی پٹنہ میں دعائیہ مجلس سے گفتگو کرتے ہوئے کیا_واضح رہے کہ حضرت مولانا محمد قاسم صاحب رحمۃ اللہ علیہ کے انتقال پر ملال کے بعد پہلی بار،جامعہ مدنیہ سبل پور پٹنہ میں منعقد رابطہ مدارس اسلامیہ عربیہ بہار کے اجلاس میں شرکت کی غرض سے جناب مولانا شوکت علی صاحب قاسمی بستوی شریف لائے تھے،اجلاس کے بعد مہتمم جامعہ مدنیہ کی رہائش گاہ نفیس کالونی پٹنہ پہونچے،اور ایک دعائیہ مجلس منعقد ہوئی،حضرت مولانا شوکت علی صاحب قاسمی بستوی کے علاوہ دارالعلوم دیوبند کے استاذ جناب مولانامحمدعلی صاحب بجنوری،جناب مولانا مرغوب الرحمن صاحب قاسمی معاون مہتمم جامعہ مدنیہ،جناب مولانا محمد حارث،قاری ایازاحمد،مولانا نسیم الہدی امام مرکزی نوری مسجد،مفتی ارشد صاحب قاسمی، حسرت صاحب،ڈاکٹر خالد صاحب،نیر اقبال صاحب ودیگر نفیس کالونی پٹنہ کی معزز شخصیات شریک ہوئیں،جناب مولانا شوکت علی صاحب قاسمی نے اس موقع پر مختصر اور خصوصی خطاب بھی کیا،انہوں نے کہا:انسان دنیاسے چلاجاتاہے،تو عمل کاسلسلہ ختم ہوجاتاہے،مگر تین چیزیں ہیں اگر کوئی چھوڑکر مراہے تو اس کاثواب ملتارہتاہے، صدقہ جاریہ،یاکوئی علم جس سے لوگ فائدہ حاصل کریں،یاصالح اولاد،مولانا موصوف نے حضرت مولانا محمد قاسم صاحب کاذکرکرتے ہوئے کہا:وہ بڑی خوبیوں کے مالک تھے،ان کے اخلاق بہت بلندتھے اور اکابر دارالعلوم دیوبند کے بڑے قدرداں تھے_اس موقع پر جناب ڈاکٹر مسعود کاظمی صاحب کے انتقال پرملال پر بھی خصوصی دعاءکی گئی،ڈاکٹر مرحوم حضرت مولانا محمد قاسم صاحب رحمۃ اللہ علیہ کے بڑے ہی عقیدت مند اور جامعہ مدنیہ کے بڑے مخیرین ومعاونین میں سے تھے،اللہ ان کی مغفرت فرمائے،آمین،مولانا کی رقت آمیز دعاء پر دعائیہ نشست اختتام پذیر ہوئی_

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے