نظم ) “الجھن ۔ از قلم :_شیبا کوثر (برہ بترہ آ رہ ،بہار )انڈیا ۔

150
(نظم ) “الجھن ۔
از قلم :_شیبا کوثر (برہ بترہ آ رہ ،بہار )انڈیا ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یا الہی ! ذہن میرا الجھ رہا ہے
ہر پہر چراغِ روشن بجھ رہا ہے
ہر نفس ہے افسُردہ
ہر خواہیش ہیں  مُردہ
کہیں پر ماتم کہیں کفن ہے
چہا ر سوُ خوف کا سایہ فگن ہے
کہیں اُمید کا ہے دامن چھُوٹا
کہیں کسی کو کسی نے لُوٹا
کہیں پر لاشیں بہ رہی ہیں
کہیں خاک غموں کو سہ رہی ہیں
کاروبار ہستی اِدھر سےاُدھر گر گئی ہے
یہ دنیا نہ جانے کدھر سے کدھر ہو گئی ہے
دُکھوں کا منظر دیکھتے دیکھتے
آنکھ پتھر  سی ہو گئی ہے
نغمہء دل کہیں کھو رہا ہے
کہیں کوئی خوف بو رہا ہے
مگر تیرا نظامِ فطرت وہی ہے
وہی ہے سورج چاند بھی وہی ہے
خوبصورت ہے آج بھی کہکشاں
تاروں سے ٹمٹماتا  آسماں
مگر زمیں کی رنگت بدل رہی ہے
ہوا بدلی بدلی سی چل رہی ہے
کثا فتوں سے بھری پڑی ہے
قدم قدم پہ نئی مصیبت دھری پڑی ہے
مصیبتوں سے اب تو نکال دے یارب
قلب و جگر کو سکون دے یارب
معاف کر دے خطا کو میرے
بحر بیکراں کر عطا کو میرے ۔۔۔!!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔……….o………………….
(غیر مطبوعہ )۔
sheebakausar35@gmail.com