نامور عالم دین ،اچھے قلم کاراورعظیم سماجی شخصیت حضرت مولانا حسن الہاشمی صاحب کاانتقال ملت اسلامیہ کاعظیم خسارہ!

91

نامور عالم دین ،اچھے قلم کاراورعظیم سماجی شخصیت حضرت مولانا حسن الہاشمی صاحب کاانتقال ملت اسلامیہ کاعظیم خسارہ!
انوار الحق قاسمی نیپالی
ڈائریکٹر :نیپال اسلامک اکیڈمی
آج بروزبدھ بتاریخ 4/نومبر 2020ء رات تقریباساڑھے9/بجےایک اندوہ ناک اورالمناک حادثہ کی اطلاع سوشل میڈیاکےذریعہ ملی :کہ دیوبند کے معروف عالم دین ،مشہور سماجی شخصیت اور ایک بڑے قلم کار حضرت مولانا محمد حسن الہاشمی صاحب بھی اب ہمیں داغ مفارقت دےگئےہیں: اناللہ وانا الیہ راجعون۔
واقعتااول وہلہ میں اس عظیم حادثہ پریقین نہیں ہورہاتھاکہ حضرت انتقال فرماکرجواررحمت میں داخل ہوچکے ہیں؛ مگر جوں ہی ناچیز کی نظر ایک نامور عالم دین، عبقری شخصیت اورعدیم المثال قلم کار حضرت مولانانازش ہماصاحب قاسمی -زیدمجدہم -کی نشر شدہ خبر(دیوبند کی سماجی شخصیت مشہور عالم دین،اچھے قلم کار حضرت مولانا محمد حسن الہاشمی صاحب انتقال فرماگئے:اناللہ وانا الیہ راجعون )پر پڑی تودل ودماغ نےیقین کرلیاکہ واقعتاحضرت اب ہم سےجداہوچکےہیں۔
آج یقینااس حادثہ فاجعہ سے دیوبند اور اس کےاطراف واکناف میں غم کاماحول چھایاگیاہوگا؛کیوں کہ حضرت ایک اچھے عالم دین اوربڑے مضمون نگارہونے کےساتھ ساتھ ایک بہترین سماجی خدمت گزار انسان بھی تھے ۔
حضرت سےہزاروں انسانوں کوفائدہ پہنچ رہاتھا،حضرت کےگھر پریومیہ تقریباپچاس افراد اپنے اپنے مختلف مسائل لےکرتشریف لاتےتھےاور ہرایک کےلیے حضرت ان کےمرض کےمطابق مناسب دوائیں تجویز فرماتےتھے،بحمدہ تعالٰی اکثر حضرات شفایاب ہوجاتےتھے،جس کی بنا ہرروزحضرت کے دروازے پر لوگوں کی ایک بھیڑجمع ہوتی تھی،اب حضرت کےانتقال سے سماجی خدمت کاایک عظیم پلیٹ فارم جھاڑ پھونک کاخاتمہ حضرت کے انتقال سےہوگیا۔
ناچیز:انوار الحق قاسمی نیپالی ڈائریکٹر :نیپال اسلامک اکیڈمی جس سال عالمی ادارہ دارالعلوم /دیوبند میں درجہ عربی ہفتم میں متعلم تھا،اسی سال ایک دفعہ حضرت -علیہ الرحمہ -کےیہاں ایک درپیش مسئلہ کولےکرپہنچا،اولاحضرت سےعلیک سلیک ہوا،پھر حضرت نےپوچھاکہ عزیزم کس ادارے میں زیرتعلیم ہیں؟ اور کس درجہ میں؟ میں نےکہا:کہ حضرت دارالعلوم میں درجہ عربی ہفتم پڑھ رہاہوں،پھر حضرت نےمتصلاہی سوال کردیاکہ آپ کہاں کےرہنےوالےہیں؟میں نےکہا:نیپال سے،حضرت کافی خوش ہوئےاورفرمایاکہ اچھاماشاء اللہ آپ نیپال سےتعلق رکھتےہیں،پھر اس کے بعد مسائل دریافت کئے اورپھر مناسب دوائیں تجویز فرمادیئے۔
حضرت سےمل کراحقرالوری کوبےحد فرحت ومسرت ہوئی،حضرت خوش اخلاق، ملنسارانسان تھے،حضرت بڑے ہی نظیف اور وقت کےپابندشخص تھے،حضرت کےدل میں امت کابہت درد تھا،حضرت امت کی فکر میں ہمیشہ محو رہتےتھے،حضرت ایک زبردست عالم دین بھی تھےاور اچھےقلم کاربھی۔

IMG 20201105 WA0035

حضرت کےانتقال سے ملت اسلامیہ کا عظیم خسارہ ہواہے،ناچیز بارگاہ ایزدی میں دست بدعاہےکہ خداوند عالم حضرت -علیہ الرحمہ-کےجملہ سیئات :کبیرہ وصغیرہ ہرایک کومعاف فرماکرجنت الفردوس میں اعلی اور نمایاں مقام عطا فرمائے اورانہیں کروٹ کروٹ راحت نصیب فرمائے، نیز پس ماندہ گان اورلواحقین کوصبرجمیل عطافرمائے،آمین ۔