جمعرات, 6, اکتوبر, 2022
ہوممضامین ومقالاتنائب امیرشریعت کاجرات مندانہ اقدام

نائب امیرشریعت کاجرات مندانہ اقدام

✒️محمد اطہر حبیب

ا مارت شرعیہ ملت اسلامیہ کا عظیم اثاثہ اور کلمہ طیبہ کی بنیاد پر وحدت واجتماعیت کا نقیب ہے ، اس ادارے کو ہمیشہ اللہ تعالیٰ کی تائید ونصرت حاصل رہی ہے اس کو ہرزمانے میں بابصیرت جامع علم وعمل شخصیات کی سربراہی حاصل رہی ہے، مفکر اسلام حضرت مولانا سید محمد ولی رحمانی نور اللہ مرقدہ نے اکابر کی روایات کے مطابق حضرت مولانامحمد شمشاد رحمانی قاسمی کی شکل میں ایک با حوصلہ، باصلاحیت اور بابصیرت نائب امیر شریعت مقرر فرمایا، حضرت کی وفات کے بعد مولانا شمشاد رحمانی فی الحال مثلِ امیر شریعت ہیں ۔
نائب امیر شریعت (امارت شرعیہ بہار، اڑیسہ وجھارکھنڈ) حضرت مولانا محمد شمشاد رحمانی صاحب قاسمی دامت برکاتہم العالیہ کی شخصیت کا اندازہ اس بات سے لگا جاسکتا ہے کہ حضرت دارالعلوم وقف کے استاد حدیث ہو نے کہ باوجود بہت سی کتابوں مصنف بھی ہے، آپ بہت سی صلاحیتوں سے متصف ہے اس کے ساتھ آپ باکمال مقرر بھی ہے آپ کی شخصیت کسی سےمخفی نہیں ہے ۔
ان تمام اوصاف و خصائل، امتیازات، وکمالات سے متصف حضرت نائب امیر شریعت کی شخصیت ہے، جن کو اللہ تعالی نے مختلف علوم و فنون میں مہارت عطا فرمائی ہے، انتظامی امور ہو یا علم و حکمت کی پیچیدگی، جس جرأت ومہارت کے ساتھ حضرت کسی بھی معاملہ کو حل پیش فرماتے ہیں، یہ ان ہی کا امتیازی وصف ہے اور شاید یہ ان اکابرین کا فیض ہے، جس کو انہوں نے مخلصانہ جذبہ کے ساتھ حاصل کیا، یہی وجہ ہے کہ امیر شریعت سابع، مفکر اسلام حضرت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب رحمہ اللہ نے ان کو اپنی حیات میں نائب امیر شریعت” کے منصب پر فائز فرمایا۔
اب تو وقت اور حالات نے یہ ثابت بھی کردیا ہے کہ حضرت امیر شریعت سابع رحمۃ اللہ علیہ کا یہ فیصلہ بالکل درست اور بروقت تھا؛ بلکہ یہ کہنے میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں ہونی چاہیے کہ یہ الہامی فیصلہ تھا؛ کیوں کہ ان کی وفات کے بعد امارت شرعیہ کو جو مسائل درپیش تھے اور پھر امیر شریعت ثامن انتخاب کے اعلان کے بعد جس طرح کا ماحول برپا کیا گیا؛ ایسے حالات میں کسی مرد آہن کی ہی ضرورت تھی، جو ان تلاطم خیز طوفان میں استقامت وثبات قدمی کے ساتھ ملت اسلامیہ کی مسائل کے حل کا فریضہ انجام دے سکے اور امت کی شیرازی بندی کو متزلزل ہونے سے بچا سکے۔ ظاہر ہے کہ جس طرح کی بہتان تراشی اور الزامات کی بارش کی گئی، ایسے میں کوئی کمزور دل کا آدمی ہوتا، تو اب تک خود کو مصلحت کی دبیز چادر میں چھپا کر کہیں کسی غار میں پناہ گزیں ہوجاتا؛ لیکن آپ نے صبر وتحمل اور ضبط و استحکام کا مظاہرہ فرمایا اور پوری دیانت داری کے ساتھ اپنے تمام امور کی انجام دہی میں مصروف عمل ہیں
بہت سے اختلافات کے بعد حضرت نائب امیر شریعت کایہ اعلان قابل ستائش ہے نائب امیر شریعت حضرت مولانا محمد شمشاد صاحب رحمانی قاسمی مدظلہ العالی نے 30/ ستمبر 2021 کو انتخاب امیر شریعت پر اتفاق رائے کے لئے تمام معزز اراکینِ شوری کا اجلاس طلب کرکے بہتر قدم اٹھایا ہے۔گرچہ یہ قدم بہت پہلے اٹھایا جانا چاہیے تھا۔لیکن چلئے دیر آید درست آید۔
9 اور 10 اکتوبر2021 کے الگ الگ تاریخ انتخابات کے انتشار سے بچنے کے لئے تمام معزز اراکینِ شوری کا یہ اجلاس امارت شرعیہ کو شدید ترین بحران سے نکالنے، اس کی اجتماعیت کو بچانے اور آپس میں مل بیٹھ کر آپسی مشاورت سے انتخاب امیر پر مناسب فیصلہ کے لئے سنگ میل ثابت ہوگا انشاءاللہ۔
ہم مسلسل طویل ترین انتخابی بحران سے شدید قلبی اور ذہنی تناؤ کا شکار ہیں اور ہرطرف سے جب مایوس ہوجاتے ہیں تو بالآخر احکم الحاکمین کی بارگاہ عالی پناہ میں اکابرین کی اس سوسالہ اجتماعی وراثت و امانت کے حفظ و امان کے لئے دعائیں کرنے لگتے ہیں کہ آخری سہارا وہی ذات ہے۔
ایسے نازک ترین موڑ پر حضرت نائب امیر شریعت کی جانب سے یہ اجلاس تاریک راتوں میں خوبصورت صبح کے لئے ایک نوید ثابت ہو
مگر افسوس کے ساتھ یہ کہنا پڑ رہا ہے کہ
نائب امیر شریعت حضرت مولانا محمد شمشادصاحب رحمانی ہیں، جنہوں نے مذکورہ اغراض و مقاصد کو بروئے کار لانے کے لئے بڑی حکمت اور دور اندیشی سے کام لیتے ہوئے 30 ستمبر کو شوری کا اجلاس طلب کیا ہے، جس کی ہر چہار جانب سے تائید اور پذیرائی جاری ہے اور یقین ہے کہ ان شاء اللہ اب غلط فہمیاں دور ہوں گی اور متفقہ لائحہ عمل طے کیا جائے گا، لیکن کچھ بدخواہ ہیں کہ اس قسم کے مخلصانہ اقدام کو روکنا چاہتے ہیں، کچھ باطل پرست ہیں جو حق کا سامنا کرنے سے ڈرتے ہیں، کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ ہم غلط ہیں اور غلط پر ہیں، اس لئے مجلس شوریٰ ہماری تائید نہیں کرے گی ،ہمارے مخفی عزائم کا پردہ فاش اور ہمارا اصلی چہرہ بے نقاب ہو جائے گا، اس لئے وہ ہر حال میں اس اجلاس کو روکنے کی کوشش کر رہے ہیں، لیکن امت مطمئن ہے کہ پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا۔

اللہ تعالی امارت کوشیرازہ بندی سے بچائیں نائب امیر شریعت کو ہمت و حوصلہ سے نوازے ۔آمین

🖊️ازقلم:
محمد اطہر حبیب
ارریاوی
متعلم : جامعہ اسلامیہ دارالعلوم وقف دیوبند
Darul Uloom Waqf Deoband

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے