ہوممضامین ومقالاتنئی نسل اور منشیات کی لت

نئی نسل اور منشیات کی لت

نئی نسل اور منشیات کی لت

     کسی بھی قوم کے لیے نوجوان اصل کو قوت ہوتے ہیں نئی نسل کا جذبہ ہی کسی بھی قوم کو ترقی سے ہمکنار کرتا ہے ملک میں نئی نسل کو ملک کی بہتر خدمت کے لئے بھرپور انداز سے تیار کرنے پر توجہ دی جاتی ہے۔لیکن آج ہمارے معاشرے میں منشیات کا بڑھتا ہوا رجحان کسی سنگین خطرے سے کم نہیں ہے منشیات کا نشہ ایک ایسی لعنت ہے جو سکون کے دھوکے سے سے شروع ہو کر زندگی کی بربادی پر ختم ہوتی ہے۔ یہ لعنت صرف ہائیر تعلیمی اداروں اور ہائیر سوسائٹی میں ہی نہیں بلکہ جگہ جگہ ایک فیشن کے طور پر سامنے نے ہو رہی ہے گاؤں دیہات کے بچے بھی اس سے محفوظ نہیں ہیں راہ چلتے چھوٹے چھوٹے بچے بھی سگریٹ کا دھواں اڑاتے دکھائی دیتے ہیں۔ پوری دنیا منشیات کے خوفناک اک سفر کے حصار میں ہے نئی نسل اپنے تابناک مستقبل سے لاپرواہ ہو کر تیزی کے ساتھ اس زہر کو مٹھائی سمجھ رہی ہے اور کھائے جا رہی ہے اور یہ زہر انسان کو دنیا و آخرت سے بیگانہ کر دیتا ہے۔ منشیات کا نشہ پہلے پہلے ایک شوق ہوتا ہے پھر آہستہ آہستہ ضرورت بن جاتا ہے اور پھر اس کے بغیر ان کی زندگی ادھوری معلوم ہوتی ہے یہاں تک کہ انسان اپنی زندگی کو تباہی کی دہلیز پر لاکھڑا کرتا ہے ۔ کسی ملک کی نئی نسل منشیات کی عادی ہو جائے تو نتائج انتہائی خطرناک ہو جاتے ہیں ہیں ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ نئی نسل کو تباہ و برباد ہونے سے روکیں۔

        مولانا عبدالصمد قاسمی

    اسلام پور کھیم چند پورنیہ

کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

- Advertisment -
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے