ميوات کے ایک حقیقی ہیرو،مدبر،دانا،بینا،مخلص، جفاکش بیباک متکلم کے انتقال پر پورا علاقہ غمگین

116

پلول میوات 29/09/2020 میوات کے نایاب جوہر غریبوں، یتیموں، بیواؤں کے مسیحا جمعیت علماء متحدہ پنجاب مجلس عاملہ کے اہم ستون، حج کمیٹی کے سابق ممبر قاری رمضان روپڑاکا مختصر علالت کے بعد اس دار فانی سے کوچ کر گئے جس سے علاقہ میوات سمیت ہریانہ،پنجاب، ہماچل، چنڈی گڑھ، یوپی،متھرا، الور، بھرتپور سمیت ملک کے جگہ جگہ کئی حصوں میں انکے انتقال پر گہرا دکھ ہوا ہے،میوات کے عام وخاص لوگوں کی زبان پر بس ایک ہی رٹ ہے
ميوات کے ایک حقیقی ہیرو، مدبر، دانا، بینا، مخلص، جفاکش، بیباک متکلم، جہدِ مسلسل و سعیِ پیہم کے پیکر اور ایک نئے طرز تعلیم کے مؤسس کو ہم نے ہمیشہ، ہمیشہ کیلئے کھو دیا، حضرت کی مذکورہ صفات مبنی بر مبالغہ نہیں بلکہ مبنی بر حقیقت ہیں، سبھی نے کہا ہم نے قاری صاحب کو بہت قریب سے دیکھا ہے،وہ ملنسار، تواضع کے اعلی نمونہ تھے،وہ غریبوں کے سچے دوست تھے، اللہ تعالیٰ غریق رحمت فرمائے، اور آخرت کے تمام مراحل کو آسان فرمائے،
آمین،جمعیت علماء متحدہ پنجاب کے صدر حضرت مولانا ہارون سنولی،جمعیت علماء متحدہ پنجاب کے سرپرست مولانا خالد قاسمی، جمعیت علماء متحدہ پنجاب کے صدر حضرت مولانا یحی کریمی،جمعیت علماء متحدہ پنجاب کے نائب صدر مولانا حکیم الدین اشرف اٹاوڑی ،مولانا انوار مالپوری، مفتی مسعود رشید مالپوری، مولانا شیر محمد امینی گھاسیڑہ،قاری اسلم بڈیڈ، مفتی تعریف سلیم ندوی نوح، قاری راشد بڈیڈ،قاری عاصم بڈیڈ، قاری لقمان سوڑاکا،قاری زکریا امام نگر، دار العلوم محمدیہ میل کھیڑلا کے مہتمم مولانا راشد قاسمی، مولانا امجد الور، سابق ریاستی وزیر ٹرانسپورٹ چودھری آفتاب احمد، چودھری اسرائیل کوٹ، چودھری بلال احمد اٹاوڑی، ابراہیم انجینئر بیسرو، میوات لیٹیسٹ گروپ، میواتی تہذیب و ثقافت گروپ، مولانا حسن جھمراوٹ، مولانا الیاس جھمراوٹ،مولانا ارشد ترواڑہ،مولانا توفیق پھونسیتہ، مولانا ناصر حسین زکریا اٹاوڑی، مولانا صابر مظاہری ساکرس،ہریانہ وقف بورڈ کے ویلفیئر آفیسر مبارک مدنی، حاجی اسماعیل کاٹپوری، حافظ مبارک اڈبر نوح، مفتی حسین اندھولہ، قاری رفیق روپڑاکا،مدرسہ معین الاسلام نوح کے صدر مدرس مفتی زاہد قاسمی، جمعیت علماء متحدہ پنجاب کے جنرل سیکریٹری مولانا شوکت، جمعیت علماء فرید آباد کے صدر مولانا جمال الدین اونچا گاؤں بلب گڑھ، مولانا صابر قاسمی،سمیت میوات کے ہزاروں علماء کرام نے خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا آج ہم نے ایسے ہیرے کو کھویا ہے جس کی بھرپائی بہت مشکل ہے آج عشاء کی نماز کے بعد روپڑاکا گاؤں میں سپرد خاک کیا جائے گا