مولانا محمود عالم قاسمی کا انتقال بڑا سانحہ: قاری توحید عالم فیضی

76

مولانا محمود عالم قاسمی کا انتقال بڑا سانحہ: قاری توحید عالم فیضی

پورنیہ: جامعہ ام القریٰ اکھوا برسونی کے سابق استاذ
قاری توحید عالم صاحب نے حضرت مولانا محمود عالم قاسمی بانی جامعہ اُم القرٰی و صدر مدرسہ کنزالعلوم مدھگری بنگلور
اور ان کے علاوہ کئی اداروں کے سرپرست کے انتقال پرملال پر دلی صدمہ کا اظہار کیا ہے، قاری صاحب نے فرمایا کہ مولانا کا انتقال بڑا ملی ،علمی ، اور تعلیمی سانحہ ہے، مولانا نے جس محنت اور جد و جہد سے ان اداروں کو پروان چڑھایا وہ مثالی بھی ہے اور تاریخی بھی، قاری صاحب نے فرمایا کہ حضرت جب بھی جامعہ تشریف لاتے تمام اساتذہ کرام اور طلبہ سے ملتے اور ہمیشہ فکر مند رہتے کہ ہمارے اساتذہ اور طلبہ کو کسی طرح کی کوئی پریشانی نہ ہو اور ہمارے ادارے کی تعلیم ہمیشہ اچھی سے اچھی ہو اور ہم نے حضرت کے ساتھ دو رمضان بینگلور میں گزارا جسمیں حضرت کے ساتھ ہی رہنا ہوتاتھا
الحمدللہ حضرت کی مہمان نوازی کو دیکھ کر یہ احساس نہیں ہوتا کہ ہم جامعہ اُم القرٰی کے استاذ ہیں بلکہ اپنے بچوں جیسا پیار دیا
اورحضرت کا یہ معمول تھا کہ گھر سے 11 بجے دن میں نکلتے مدرسے کے کام کے لئے تو رات 11 بجے گھر تشریف لاتے پورے دن مدرسے کے کام میں ہی لگے رہتے

اللہ ربّ العزت سے دعا ہے کہ مولانا مرحوم کی مغفرت فرمائے، پسماندگان کو صبر جمیل دے، اور ادارے کو نعم البدل عطا فرمائے،قاری صاحب نے اس موقع سے خصوصیت کے ساتھ ماسٹر اعجاز اور جناب عابد اور ان کے اہل خانہ سے تعزیت کی ہے، اور فرمایا ہے کہ مصیبت کی اس گھڑی میں ہم سب آپ کے ساتھ ہیں۔