مسلم نوجواں صالح معاشرہ کی تعمیر کیلئے اپنی زمہ داریوں کو سمجھیں، مفتی رضوان قاسمی

31

بیرول 20 / مارچ ( شمیم احمد رحمانی) نکاح کرنا عبادت ہے اسلام نے نکاح کو جتنا آسان بنایا ہے کسی دوسرے مذہب میں اس کا تصور بھی نہیں ہے آج مسلم معاشرے میں غیروں سے متاثر ہو کر نکاح کے عمل کو ، غیر اسلامی رسم و رواج اور فضول خرچی کو اس قدر داخل کر دیا گیا ہے کہ مالی اعتبار سے کمزور مسلم گھرانے کی بچیوں کا سمندر میں کود کر ، پھانسی لگا کر ، زہر کھا کر مرنا، غیروں کے ساتھ چلی جانا ہمارے سماج پر بدنما داغ ہے اور اس کو مٹانے کی ذمہ داری کسی اور کی نہیں بلکہ صرف اور صرف ہملوگوں کی ہے مذکورہ باتیں یہاں بیرول سبڈویژن آفس سے متصل موضع اکبرپور بینک میں شہر کولکاتا مچھوا کے مشہور پھل تاجر جناب محمد کتاب الحق صاحب کے اکلوتے صاحبزادے حافظ محمد شاہد کا نکاح اسی گاؤں کے رہنے والے مشہور پھل تاجر جناب محمد مسعود عالم عرف روشن بابو کی صاحبزادی زلیخا خاتون سے پڑھانے سے قبل صدر مرکزی جمیعت علماء سیمانچل جید عالم دین حضرت مولانا مفتی محمد رضوان عالم قاسمی استاذ مدرسہ رحمانیہ افضلہ سوپول بیرول دربھنگہ نے کہی انہوں کہا کہ ہمارے نوجوانوں کو حالات کی سنگینی کے پیش نظر صالح معاشرہ کی تعمیر اور اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے کیلئے آگے بڑھنا چاہیئے ورنہ تاریخ کی نظروں نے وہ دَور بھی دیکھا ہے ، لمحوں نے خطا کی تھی صدیوں نے سزا پائی اس موقع پر جناب حاجی عبدالعزیز ، ماسٹر ایوب ، محمد منصور ، ڈاکٹر محمد یونس ، مولانا محمد ارشاد ، مولانا محمد عرفان ندوی ، قاری محمد وصی احمد ، مولانا عبدالباری ندوی ، چاند بابو ، ڈاکٹر نسیم احمد ، مولانا شفیق منسرا ، محمد نور عالم دہلی ، ماسٹر لال بابو ، محمد رحمت علی، سابق سرپنچ محمد علی، پھل تاجر جناب خورشید ، محمد وصی عرف مہینام ، حافظ عبدالسلام ، حافظ محمد شمس الضحی امام مسجد وغیرہ سمیت برادری و سماج کی اہم سرکردہ شخصیات موجود رہے