ہفتہ, 8, اکتوبر, 2022
ہومزبان وادبمحبت کیاہے دل کادرد سے معمورہوجانا

محبت کیاہے دل کادرد سے معمورہوجانا

محبت کیا ہے دل کا درد سے معمور ہوجانا
(شیخ الاسلام مفتی محمد تقی عثمانی)

محبت کیا ہے دل کا درد سے معمور ہوجانا
متاع جاں کسی کو سونپ کرمجبور ہوجانا

ہماری بادہ نوشی پر فرشتے رشک کرتے ہیں
کسی کے سنگِ در کو چومنا، مخمور ہوجانا

قدم ہیں راہِ الفت میں تومنزل کی ہوس کیسی؟
یہاں تو عین منزل ہے تھکن سے چور ہوجانا

یہاں تو سر سے پہلے دل کا سودا شرط ہے یارو!
کوئی آسان ہے کیا سرمد و منصور ہوجانا

بسا لینا کسی کو دل میں، دل ہی کا کلیجہ ہے
پہاڑوں کو تو بس آتا ہے جل کر طُور ہو جانا

مری کوتاہیوں نے تم کو بخشیں رونقیں کیا کیا
خفا ہو کر لَجانا، روٹھ کر کچھ دُور ہوجانا

مثالِ شمع اپنی ذات کو پِگھلانا پڑتا ہے
بہت مشکل ہے ہمدم ظُلمتوں کا نُور ہوجانا

نظر سے دور رہ کر بھی تقیؔ وہ پاس ہیں میرے
کہ میری عاشقی کو نَنْگ ہے مجبور ہوجانا

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے