ہومبریکنگ نیوزغریبوں کا خیال رکھیے 

غریبوں کا خیال رکھیے 

غریبوں کا خیال رکھیے 
مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی
نائب ناظم امارت شرعیہ پھلواری شریف

دسمبر اور جنوری کا مہینہ بہار میں سر د ہواؤں اور یخ بستہ راتوں کے لیے مشہور ہے ، کڑاکے کی سرد اور برفانی لہروں کی وجہ سے متوسط مزدور اور غریب طبقات کے لیے زندگی گذارنا دشوار ہوتا ہے ، وہ لوگ جن کے سروں پر چھت نہیں ہے ، وہ فٹ پاتھ پر سوتے ہیں، ان کے لیے سردی کے قہر سے خود کو بچانا مشکل ہوجاتاہے ، ٹھنڈک گوشت وپوست ہی کو نہیں اعضاءرئیسہ پھیپھڑے اور قلب وغیرہ کو متاثر کرتی ہے ، جو قلب کے مریض ہیں ان کے ہارٹ اٹیک کے امکانات بڑھ جاتے ہیں، غرباءاگر ٹھنڈ کی چپیٹ میں آگیے تو ان کے لیے علاج کرنا بھی مشکل ہوجاتا ہے، بہار میں اس وقت بارہ سے پندرہ کلومیٹر کی رفتار سے پچھوا ہوا چل رہی ہے، جس نے درجۂ حرارت کو گرا کر نچلی سطح تک پہونچا دیا ہے ، محکمہ موسمیات کی مانیں تو پٹنہ میں درجۂ حرارت 9.1گیا میں 6.2، بانکا میں6.4، اورنگ آباد میں 8.3، پورنیہ میں 10.8سہرسا میں 10.5سوپول میں 12.4بھاگلپور میں 11.3، مظفر پور میں 11.8رہتاس میں 11.5شیخ پورہ میں 10.5اور بیگو سرائے میں 9.7رکارڈ کیا گیا ہے ، جس نے غریبوں کی مشکلیں بڑھادی ہیں۔
ایسے میں اسلام کا طریقہ یہ ے کہ جو لوگ اس قسم کی پریشانی سے محفوظ ہیں وہ ان غریبوں کا خیال رکھیں اور اپنے ارد گرد کے ٹھنڈک میں پریشان حال لوگوں کی جس قدر مدد کر سکتے ہوں کریں، امارت شرعیہ بھی ایسے موقع سے مستحقین تک کمبل پہونچانے کا کام ہر سال کرتی ہے، امارت شرعیہ کے ذمہ داروں نے ضلع ، بلاک اور پنچایت سطح پر جو امارت شرعیہ کمیٹی کے صدور اور سکریٹریز ہیں، یا ذیلی دفاتر کے ذمہ دار ہیں، ان سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنے اپنے علاقہ میں امارت شرعیہ کے زیر اہتمام اس کام کو کریں، اسلامی اصول کے مطابق علاقہ کے مالداروں سے رقومات حاصل کریں اور اس علاقہ کے ضرورت مندوں تک کمبل خرید کر پہونچادیں۔
جن علاقوں میں مقامی طور پر یہ کام ممکن نظر نہیں آئے،وہ اپنی رقومات بیت المال امارت شرعیہ کو ارسال کردیں،ا نشاءاللہ مرکزی دفتر امارت شرعیہ کے ذریعہ حسب وسائل بڑے پیمانے پر اس کام کو کیاجائے گا، اور اہل خیر عند اللہ ماجور اور عند الناس مشکور ہوں گے ۔

توحید عالم فیضی
توحید عالم فیضیhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

- Advertisment -
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے