ضلع ارریہ کے حسن پور گاؤں میں آتشزدگی سے وفات پانے والے کے اہل خانہ سے تعزیت کے لئے پہنچا امارت شرعیہ کا وفد

220

ارریہ (توصیف عالم مصوریہ) نوائے ملت

مارت شرعیہ بہار اڑیسہ و جھارکھنڈ کے نائب امیر شریعت مولانا محمد شمشاد رحمانی قاسمی کی ہدایت پر دارالقضاء امارت شرعیہ ارریہ کا ایک وفد قاضی شریعت ارریہ مفتی محمد عتیق اللہ رحمانی کی قیادت میں ضلع ارریہ کے پلاسی بلاک کے ایک گاؤں حسن پور نیا ٹولہ پہنچا ۔جہاں گزشتہ دو ستمبرکی رات تقریباً دو بجے داماد ملزم مجسم نے اپنے سسر محمد ارشاد ،ساس بی بی مرضینہ خاتون، سالا محمد ابوذر اور سالی شائستہ پروین کے بدن پرسونے کی حالت میں پٹرول چھڑک کر آگ لگادی جس سے تمام لوگ اس کی چپیٹ میں آگئے ۔ واضح رہے کہ مرحوم محمد ارشاد جو ملزم مجسم کے خالو بھی ہیں۔ ان کی بیٹی ننہی بیگم کی شادی کجری فرساڈانگی گاؤں کے رہنے والے مجسم سے تقریبا چار سال پہلے ہوئی تھی لیکن بیس دن قبل ہی ملزم نے طلاق دے دیا تھا مجسم ننھی خاتون کو لے جانا تھا ۔ سسرال والوں کے منع کرنے کی وجہ سے وہ مستقل دھمکی دیا کرتا تھا ۔ وہ آگ میں جلانے کی بھی بات کیا تھا ۔ جس کے ڈر سے ننھی خاتون کو اپنے رشتہ دار کے یہاں بھیج دیا گیا ۔ اور اسی رات میں ملزم نے اس گھناونے واردات کو انجام دیا ۔ آگ میں جھلسنے کی وجہ سے محمد ارشاد، ان کی بیوی مرضینہ خاتون ، دس سالہ بیٹا ابوذر ان تینوں کی موت علاج کے دوران ھو گئی اور بارہ سالہ لڑکی شائستہ پروین پورنیہ میں زیر علاج ہے ۔ جس کی حالت تشویشناک بتائی جارہی ھے۔

امارت شرعیہ کی ٹیم نے حکومت سے مطالبہ کیا ھے کہ اس معاملہ کی تفتیش کر تمام ملزمین کے خلاف سخت قانونی کارروائی کرے اور اہل خانہ کو حکومت کی جانب سے معقول معاوضہ دیا جائے نیز امارت شرعیہ کی ٹیم نے نائب امیر شریعت مولانا محمد شمشاد رحمانی کی جانب سے تعزیت مسنونہ پیش کیا اور انہیں تسلی دی کہ مصیبت کی اس گھڑی میں امارت شرعیہ آپ سبھوں کے ساتھ ھے
اس موقع سے جناب امتیاز انیس عرف لڈو سابق ضلع صدر جن ادھیکار پارٹی ، مظہر عالم سماجی کارکن ، عادل عالم، حافظ صفات اللہ، محمد اصغر غلام مصطفیٰ اور محمد ابرہیم وغیرہ موجود تھے