ہومبریکنگ نیوزسرکاری اسپتالوں میں بغیر کمبل, ہیٹر کے کانپ رہے ہیں مریض

سرکاری اسپتالوں میں بغیر کمبل, ہیٹر کے کانپ رہے ہیں مریض

سمستی پور، 9 جنوری 2023
سمستی پور, مشن 60 دن اور پھر کوالٹی کنٹرول کے باوجود سرکاری ہسپتالوں کا نظام بہتر نہیں ہو رہا، شدید سردی میں صدر ہسپتال سے لے کر بلاکوں کی پی ایچ سیز تک کمبل اور ہیٹر کا کوئی انتظام نہیں، نتیجتاً مریض کہاں ہیں سردی میں وارڈ میں داخل مریض سے لے کر میٹرنٹی وارڈ تک یہی صورتحال ہے تاج پور کے ایک مریض سنتوش کمار، جنہیں تاج پور ریفرل اسپتال سے ریفر کیا گیا ہے، جو 5 دن سے صدر اسپتال میں داخل ہے، کا کہنا ہے کہ بیڈ شیٹ بھی تبدیل نہیں کی گئی دو دن سے موپ بھی نہیں کیا۔  انہوں نے کہا کہ کمبل مانگنے پر نہیں دیا گیا۔  اس نے گھر سے کمبل منگوائے ہیں وارڈ میں ہیٹر تک نہیں ہے۔  جس کی وجہ سے لوگ اس سخت سردی میں پریشان ہیں  مزدور کی طرف سے وقتاً فوقتاً رقم کا مطالبہ کیا جاتا ہے وارث نگر کے ہنسا گاؤں کی آرتی دیوی، اس کا بچہ راجہ داخل ہے آرتی دیوی کا الزام ہے کہ وارڈ میں کمبل نہیں ہے۔  نہ ہی کوئی ہیٹر ہے بیمار بچے سردی سے پریشان ہیں ایسی حالت میں بیماری کا علاج کیسے ہو سکتا ہے خاتون نے ہسپتال کے عملے پر ہر بات پر پیسے مانگنے کا الزام بھی لگایا دوسری جانب اتوار کو مورادیوا پی ایچ سی میں ایک خاتون کو ڈلیوری کے بعد داخل کرایا گیا مفصل تھانے کے تحت چٹونی گاؤں کے امریش رائے کی بیوی سنگیتا دیوی نے بتایا کہ وہ تین دن سے یہاں داخل ہے  ڈیلیوری ہو چکی ہے اسپتال کی طرف سے کمبل دیے گئے ہیں۔لیکن وارڈ میں ہیٹر نہیں ہے۔جس کی وجہ سے شدید سردی پڑ رہی ہے۔ان جگہوں کا مسئلہ صرف چند مثالیں ہیں کم و بیش یہی صورتحال ضلع کے دیگر پی ایچ سیز اور سب ڈویژنل ہسپتالوں میں بھی ہے محی الدین نگر، حسن پور، وارث نگر، وبھوتی پور، دلسنگھ سرائے، پٹوری، ودیا پتی نگر، اجیار پور، بٹھان، سنگھیا، کلیان پور، تاج پور ریفر اسپتال، پوسا سب ڈویژنل اسپتال وغیرہ کے وارڈوں میں ہیٹر کے ساتھ کمبل کی کمی ہے دوسری جانب جب سول سرجن سنجے کمار چودھری سے اس بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے بتایا کہ جو لوگ کمبل مانگتے ہیں وہ مل جاتے ہیں صدر اسپتال سمیت پی ایچ سی جہاں مریض رہتے ہیں وہاں کمبل اور ہیٹر کا انتظام کیا گیا ہے  مریضوں سے کمبل کی ضرورت کے بارے میں پوچھا جاتا ہے مانگنے والوں کو کمبل فراہم کیے جاتے ہیں۔  انہوں نے کہا کہ ہر بستر پر ہیٹر رکھنا ممکن نہیں۔ہر وارڈ میں ایک یا دو ہیٹر دستیاب کرائے گئے ہیں۔  پی ایچ سی وغیرہ ان جگہوں پر جہاں ہیٹر نہیں ہے۔وہاں جلد ہی ہیٹر مہیا کر دیا جائے گا۔
توحید عالم فیضی
توحید عالم فیضیhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

- Advertisment -
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے