جمعرات, 6, اکتوبر, 2022
ہوماسلامیاتدین سے دوری ہماری پریشانیوں کا سبب: حافظ وقاری عبدالقدوس ہادی قاضی...

دین سے دوری ہماری پریشانیوں کا سبب: حافظ وقاری عبدالقدوس ہادی قاضی شہر کانپور

اپنے معاشرہ کی اصلاح کرکے اللہ کو کریں راضی
کانپور(شکیب الاسلام) آج جامعہ عربیہ اشاعت العلوم قلی بازار میں ایک میٹنگ کا انعقاد قاضی شہر حافظ و قاری عبدالقدوس ہادی کی صدارت میں ہوا، میٹنگ میں 25/ستمبر۲۲۰۲ مطابق 27 /صفرالمظفر۴۴۴۱ بروز اتوار گلشن میرج ہال میں ہونے والے جلسہ اصلاح معاشرہ و اجتماع خواتین کی تیاریوں اور اس پروگرام کو کامیاب بنانے کے تعلق سے غور و خوض ہوا۔ اس میٹنگ کو خطاب کرتے ہوئے قاضی شہر حافظ و قاری عبدالقدوس ہادی نے کہا کہ آج ہمارے حالات بہت خراب ہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم نے اللہ کے بتائے ہوئے راستے سے منہ پھیر لیا ہے، ہم اللہ کے حقوق ادا نہیں کر رہے ہیں نہ ہم والدین کے حقوق ادا کر رہے ہیں اور نہ بہن بھائیوں کے نہ پڑو سیوں کے حقوق ادا کر رہے ہیں اس لئے ہمارے سامنے مسائل کا انبار ہے۔کسی عمارت کی مضبوطی اس کی بنیاد پر منحصر ہوتی ہے اگر بنیاد کمزور ہوگی تو عمارت کمزور ہوگی۔اگر ہماری دین کی بنیادیں مضبوط ہوتی تو ہمیں یہ دن دیکھنے نہ پڑتے اگر دین کا علم ہوتا اگر دین سے وابستگی ہوتی تو ایسے حالات کا سامناہمیں نہ کرنا پڑتا، اس لئے ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم دین کو سیکھیں۔اپنی اصلاح کی فکر کیجئے اپنے بہن بھائیوں کو اپنے والدین کو اپنے گھر خاندان کو اپنے بیٹے بیٹیوں کی اگر ہم خود اپنے و معاشرے کی اصلاح کی فکر نہیں کریں گے تو کون کرے گا۔اگر ہم اپنے معاشرے کو دیندار بنائیں گے تو خود بخود معاملہ حل ہو جائے گا،اللہ ہماری مدد فرمائے گا،اس لئے  ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم دین سے وابستہ ہوں دیندار بنیں، معاشرے کو دیندار بنائیں اس لئے ہم نے اصلاح معاشرہ کی مہم شروع کی ہے۔ اس سلسلے میں ہماری کوشش ہوگی کہ ہم ایسے پروگرام کریں گے جس کی دین و ملت کو ضرورت ہے ۔کسی ماں کی گود کو انسان کا پہلا مدرسہ بتایا گیا،اس مہم کا مقصد یہ ہے کہ ہمارے گھروں کی خواتین کی بھی اصلاح ہو جائے تاکہ ہمارے گھروں میں جو بچے پیدا ہوں تو ماں کی گود میں بچوں کی بہتر تعلیم و تربیت کی راہ ہموار ہو جائے۔یہ ہماری ذمہ داری ہے ہمیں اپنا یہ حق ادا کرنا ہے اس ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے یہ مہم شروع کی گئی ہے تاکہ جو برائیاں خواتین اور بچوں سے متعلق ہوں ان کی نشاندہی کرکے اصلاح ہو سکے،قاضی شہر نے میٹنگ میں بڑی تعداد میں موجود نوجوانوں سے گزارش کی کہ اس مہم کو صرف خانہ پری نہ سمجھیں بلکہ اپنی ذمہ داری فرض اور حق سمجھ کر ادا کرنے کی کوشش کریں تو پروگرام بہتر اور کامیاب ہوگا جو بھی کام ہم محنت کے ساتھ کرتے ہیں اس میں کامیابی ملتی ہے۔قاضی شہر نے کہا کہ آج جو بھی تھوڑا بہت دین ہمارے اندر موجود ہے وہ مدارس کی دین ہے،مدارس اسلامیہ دین کے قلعے ہیں، دین کی اشاعت و فروغ اور تحفظ کا ذریعہ ہیں، جہاں حافظ و مولوی چٹائیوں پر بیٹھ کر ہمیں قرآن اور کلمہ سکھاتے ہیں،یہ انہیں مدارس کی دین ہے، اگر مدارس ہی نہیں تو ہم بھی نہیں ہمارا دین بھی نہیں۔ میٹنگ میں بطور خاص مولانا عبدالقادر قاسمی،مولانا محمد شاکر قاسمی،حافظ محمد شمیم،مفتی سلطان قمر قاسمی،حافظ محمد اسامہ،محمد زاہد، مولانا محمد سلمان،محمد ابراہیم،حافظ ابو بکر وغیرہ موجو د رہے۔
روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے