خدمت خلق بھی ایک اہم فریضہ ہے

49

حدیث مبارک ہے کہ، انسانوں کی خدمت سب سے بڑی عبادت ہے ” دین اسلام نے صرف احترام انسانیت کا ہی درس نہیں دیا بلکہ انسانوں کی خدمت کو عظیم ترین عبادت بھی قرار دیا ہے ۔

کتنے عظیم ہے وہ لوگ جن کا جینا مرنا دوسروں کے لۓ ہے، جو اپنے ذاتی فائدہ کی پرواہ نہ کرتے ہوۓ دوسروں کی بہتری کے لۓ کام کرتے ہیں۔ رب العزت نے انسانوں کو اس دنیا میں بھیجنے کے بعد دو قسم کے کام ان کے سپرد کۓ پہلے کام کو “حقوق اللہ” کہا گیا۔ دوسرے کو “حقوق العباد” سے پکارا گیا اللہ تعالا کی عبادت اور اس کی بندگی کا حق ادا کرنا ضروری ہے۔ جیسے نماز روزہ حج زکوة حقوق اللہ کے ضمن میں آتے ہیں۔ اس کے برعکس خدا کے بندوں کی دلجوئ کرنا ان کے سکھ دکھ میں شریک ہونا، ان کے حقوق ادا کرنا، ان کی خدمت کرنا اللہ کو راضی کرنا ہے

ایک ایسا ہی کردار ہمارے علاقۂ ضلع سہارنپور میں دیکھنے کو ملا، لاکڈاؤن اور کرونا وائرس کی مہاماری کے دوران آل انڈیا ملی کونسل ضلع سہارنپور کے جفاکش کار کنان اور ان کے ساتھ ملی کونسل ضلع سہارنپور کے صدر مولانا ڈاکٹر عبدالمالک مغیثی مہتمم جامعہ رحمت گھگھرولی کی قربانیاں ایسی ہیں کہ اگر ان پر ایک مستقل ڈاکیومنٹری تیار کرکے مختلف زبانوں میں عام کیا جاۓ تو یہ خدمت خلق کے حوالہ سے اہل اسلام کا ایک شاندار تعارف ثابت ہوگا۔ آپ جیسے زمینی جدوجہد کرنے والے لوگ امت میں بہت کم دیکھنے کو ملینگے۔ جو جاگتے ہوۓ امت کی خاطر مجسم دھڑکتے ہیں اور تڑپتے ہوۓ سوتے ہیں۔ رمضان کا دوپہر ہے کڑاکے کی گرمی ہے اوپر سے اللہ تعالا کاعذاب جو کرونا وائرس کی شکل میں لوگوں پر چھایا ہوا ہے* *اللہ تعالا کے اس عذاب سے بچنے کے لۓ لوگ گھروں س باہرنکلنے سے ڈر رہے ہیں
لیکن مولانا اور انکی ٹیم اس شدت کی گرمی میں بھی لوگوں کی خدمت کرنے سے پیچھے نہی ہٹے
اس لاکڈاؤ کے درمیان مدارس میں پھنسے سینکڑوں طلبہ کے لۓ ان کا سہارا اور ان کے مونس غمخوار بنے۔
آل انڈیا ملی کونسل کے رضاکاروں نے دکھی انسانیت کی خدمت کے لۓ موسم کی شدت اور بھوک و پیاس تک کی پرواہ نہ کی اور کئی واقعات تو ایسے بھی ہیں کہ ملی کونسل کے دیوانوں نے اپنی جانوں کو ہتھیلی پر رکھنا تک گوارہ کر لیا لیکن انسانیت کی خدمت سے پیچھے نہیں ہٹےاچھے وقت میں تو سب ساتھ ہوتے ہیں۔ لیکن کٹھن، کڑے، برے اور آزمائش کے وقت ثابت قدمی کا مظاہرہ کرنا اور دکھی انسانیت کی خدمت کا عمل جاری رکھنا کوئ معمولی کام نہی۔۔
حقیقت یہی ہے کہ اللہ تعالا کی رضا اور خوشنودی کے لۓ جو افراد سخت، مشکل اور آزمائش کی گھڑی میں بھی دکھی انسان کی خدمت کا عمل جاری رکھتے ہیں وہی انسانیت اور عظمت کی بلندیوں پر فائز ہوتے ہیں۔۔

مولانا ڈاکٹر عبدالمالک مغیثی عاشق ملت حضرت مولانا حکیم محمد عبداللہ مغیثی صدر آل انڈیا ملی کونسل کے چھوٹے صاحبزادہ ہیں اور جامعہ رحمت گھگھرولی ضلع سہارنپو کے مہتمم بھی ہیں

ہم اہل جامعہ مولانا موصوف کی ان تمام خدمات کو سراہتے ہوۓ دل کی گہرائیوں سے استقبال کرتے ہیں۔ دعاء گو ہیں اللہ تعالا مولانا موصوف کی تمام شرور وفتن نظر بد سے محفوظ رکھتے ہوۓ اس خدمت کے لۓ قبول فرماۓ۔ آمین

{ تحریر۔۔بندہ محمد سلمان ایوبی ابن مولانا محمد طیب قاسمی مدیر جامعہ حضرت فاطمہ(رض) عالمپور عمادپور راۓپور ضلع سہارنپور }