جمعرات, 29, ستمبر, 2022
ہوماعلان واشتہاراتحضرت امیر شریعت کے تعلیمی افکار کو لیکرمولانا محمد شبلی القاسمی کاایک...

حضرت امیر شریعت کے تعلیمی افکار کو لیکرمولانا محمد شبلی القاسمی کاایک تاریخی سفر

حضرت امیر شریعت کے تعلیمی افکار کو لیکرمولانا محمد شبلی القاسمی کاایک تاریخی سفر
مفتی محمد نظرالباری الندوی مھتمم مدرسہ اسلامیہ پالی
ملکی ماحول اور تیزی سے بگڑتےاخلاقی حالات پر بےچینی ہرفکرمند جواب دہ شخص؛ جماعت’ اور اداروں کو ہے’اور ہر کوءی اس گھٹن کے ماحول سے باہرآنے کے لئے بےچین ہے’علماء’ صلحاء’ سماجی اور معاشرتی فکر رکھنے والے افراد اور تنظیمیں اس کے لیے حکمتیں’ لاءحہ عمل تلاش کرنے میں لگی ہیی’لیکن حقیقت یہ ہے کہ مرض بڑھتا گیا جوں جوں دواکی؛ اسکی بڑی وجہ یہ ہے کہ بچے ؛ بچیوں کے مذھبی تعلیم و تربیت پر والدین اور گارجین کی جتنی توجہ ہونی چاہیے نہیں ہے’اسی لیے امارت شرعیہ نے بنیادی دینی تعلیم اور اخلاقی و ایمانی تربیت پر شروع سے توجہ دی ہیں’ اسی سوچ اورفکر کے تحت مفکر اسلام امیر شریعت سابع حضرت مولانا محمد سید ولی رحمانی نوراللہ مرقدہ نےامارت کے پلیٹ فارم سےنءی نسلوں کی مثبت ذہنی’فکری’ تعلیمی اور اخلاقی ترقی کے لئے کءی تحریکیں شروع فرمائی خاص طور پر بنیادی دینی تعلیم اور عصری تعلیم کیلئے کوچنگ سینٹر اوراسکولوں کے قیام کی عملی جد و جہد فرمائی’اور معاشرے میں اس کے لئے ترغیب و تحریک مختلف راہیں اختیار کی وہ اھل علم ودانش اور فکر مند افراد کواس جانب ہمیشہ متوجہ کرتے رہے،خودامارت شرعیہ کی جانب سے ہر ضلع میں امارت پبلک اسکول کہ قیام کا تہیہ فرمایا اور کءی اضلاع میں آپنے اسے قاءم بھی فرمایا ۔ تیزی سے اس جانب امارت شرعیہ کے ذمہ داران وکارکنان اور مخلصین و محبین کولگنے اور اقدام کرنے کی طرف متوجہ کرتے رہے لیکن زندگی نے وفا نہ کی اور ان خوابوں کی تعبیر کی تکمیل اپنی حیات میں نہ کرسکے،’اللہ کا شکر ہے ان کے فرزند اکبر’ سچے جانشین امیر شریعت ثامن حضرت مولانا سید محمد احمد ولی فیصل رحمانی دامت برکاتہ العالیہ اپنے والد بزرگوار کے ان افکار و نظریات کے سچے وارث ثابت ہویے’ اور جلدہی انہوں نے امارت شرعیہ کے بے لوث مخلص متحرک و فعال خادم قاءم مقام ناظم حضرت مولانا محمد شبلی القاسمی دامت برکاتہم عالیہ جنہیں خود انکے والد بزرگوار نے تیار کیا تھا کہ ساتھ اور دوسرے ذمہ داران اور کارکنان کو لیکر اس کارواں کوآگے بڑھانے میں غیر معمولی دلچسپی لی’اور بہار اڈیسہ و جھارکھنڈ کے مسلمانوں کے تعلیمی معیار کو بلند کرنے اور نءی نسلوں کو الحاد و ارتداد سے بچانے کےلئے اس سال کم ازکم ١٠٠ نئے مکاتب اور دس نءے اسکول کے قیام کا منصوبہ بنایا ہے؛ جس پر امارت شرعیہ کہ کار کنان حضرت مولانا شبلی القاسمی قاءم مقام ناظم امارت شرعیہ کی قیادت میں با ضابطہ کام کررہےہیں؛ اور کئی اضلاع میں اسکول کے قیام کی کوششیں ہو رہی ہے’ اسی سلسلے میں حضرت امیر شریعت دامت برکاتہم العالیہ کی ہدایت پر حضرت مولانا شبلی القاسمی قائم مقام ناظم امارت شرعیہ نے مورخہ ٥ /جنوری٢٠٢٢کومعروف سماجی و ملی رہنما سابق وزیر مالیات بہار جناب عبدالباری صدیقی صاحب سے ملاقات اور ان کہ قائم کردہ ایک اسکول کا معائنہ کرنے اوراس میں امارت شرعیہ کے تعاون سے تعلیمی روح پھونکنے خاص طور پراس کثیر مسلم اکثریتی علاقہ کے بچیوں کی بہتر تعلیم و تربیت کا پیغام لیکر ان کے آبائی گاؤں روپس پورضلع دربھنگ تشریف لائے؛ سابق وزیر موصوف نے بھی اپنی اعلی فکر؛ مثبت نظریات اور علاقے کی تعلیمی پسماندگی دور کرنے کی غرض سے اس اسکول کو امارت کے حوالے کرنے اور حضرت امیر شریعت کی سرپرستی میں چلانے کا اعلان فرمایا جس سے علاقے میں ایک نءی خوشی کا ماحول پیدا ہوگیا اور امارت شرعیہ کے ساتھ ساتھ حضرت مولانا محمد شبلی القاسمی قائم مقام ناظم امارت شرعیہ اور جناب عبد الباری صاحب کی اس فکر مندی کو لوگ ہر طرف سراہ رہے ہیں’ اور اسےاس خطے کے لئے ایک تاریخی اور انقلابی فیصلہ قرار دے رہے ہیں ‘ اس سے اسلامی اور دینی ماحول میں عصری تعلیم و تربیت کا موقع نءی نسلوں کو ملےگا؛
قیام مکاتب و اسکول کے تعلق سے ویسے تو امارت شرعیہ کا پورا عملہ متحرک اور فعال نظر آتا ہے اور امارت شرعیہ سے منسلک ہر فرد اپنی صلاحیتوں کے مطابق اس سلسلے میں کوشاں ہیں لیکن اس تعلق سےحضرت مولانا محمد شبلی القاسمی قاہم مقام ناظم امارت شرعیہ کی توجہ اور دلچسپی قابل قدر ہے امیر شریعت سابع حضرت مولانا سید محمد ولی رحمانی نوراللہ مرقدہ نے اپنی دور امارت میں امارت شرعیہ کے عظیم خدمات کے لیے انکو منتخب فرمایا حضرت رحمۃ اللہ علیہ کے اعتماد پر پورا اترتے ہویے انہوں نے حضرت رحمۃ اللہ علیہ ہی کی رہنمائی میں امارت شرعیہ کے تمام شعبوں میں اپنی خداداد صلاحیتوں اور محنت و مشقت کے ذریعہ ایک طرح کی نئی توانائیاں اور اسپرٹ پیدا کرنے کی کامیاب کوششیں کیں جس کا مشاہدہ میں نے خود کئی موقعوں پر کیا گزشتہ لاک ڈاؤن میی جبکہ عام لوگ نفسی نفسی کے عالم میں تھے حضرت امیر شریعت رحمۃ اللّٰہ علیہ کی ہدایت پر انہوں نے امارت شرعیہ کے پلیٹ فارم سےاپنی صحت اور جان کی پرواہ کیے بغیر قوم و ملت اور خدمت خلق کے تعلق سے جو خدمات انجام دیں ہیں وہ لائق تحسین ہی نہیں بلکہ قابل تعریف ہے’ لاک ڈاؤن میی اکثر ادارے کے ذمہ داران جہاں مالی مشکلات میں تھے وہیں مولانا محمد شبلی القاسمی نے حضرت امیر شریعت رحمہ اللہ کی ہدایت اورحکمت عملی کو بروئے کار لاتے ہوئے بیت المال امارت شرعیہ کے نظام کو مستحکم رکھنے میں اپنے رفقاء کار کے ساتھ ہر ممکن کوششیں کیی’ فکر امارت کوزمینی سطح پرلانےاورپیغام امارت کو ہرکسی تک پہونچا نےکے لیے نہایت ہی فکر مندی کے ساتھ کام کرنا انکی اولین ترجیحات میں ہے؛وہ جب تک اس سفر میں ہم لوگوں کے ساتھ رہے امارت شرعیہ اور حضرت امیر شریعت دامت برکاتہم العالیہ کے پیغام اور ہدایات بڑی دردمندی اور فکرمندی کے ساتھ رکھتے رہے’ اس سفر میں کءی اور دوسرے تعلیمی اداروں کا معاینہ کرکے ان کے منتظمین کو حوصلہ دیتے رہے’ اس کے علاوہ اور بھی کئی مقامات پر انہوں نے اسکول کے لیے زمین کی حصولِ یابی کی لوگوں سے فریاد لگاءی’ کءی جگہوں پر ماشاءاللہ! کامیابی بھی ملی’حضرت امیر شریعت مولانا سید احمد ولی فیصل رحمانی کے مشورے سے ان شاء اللہ ! ان مقامات پر علم کا چراغ روشن ہوگا اور جہالت وبے دینی کی تاریکی دور ہوگی ، قاءم مقام ناظم امارت شرعیہ حضرت مولانامحمد شبلی القاسمی دامت برکاتہم العالیہ جس جذبے اور قوم و ملت کےتئیں’ جس فکر مندی’ حسن اخلاق؛ عمدہ برتاؤ؛ شفقت ومحبت سے پیش آرہے تھے ‘اس سے صاف ظاہر ہورہا تھاکہ آپ ایک اچھے منتظم کی حیثیت سے ابھرکرسامنےآءے ہیں’اورکیوں نا؟آپ حضرت امیر شریعت سابع رحمت اللہ علیہ کے منتخب کردہ اور تربیت یافتہ ہیں’ اللہ تعالیٰ ان کی عمر؛ علم وفضل؛ اور صلاحیت وصالحیت میں مزید برکتیں عطاء فرمائے، اور انہیں حوصلہ دے کہ وہ موجودہ امیر شریعت کی قیادت میں امارت شرعیہ کے کاموں کو مزید ترقی عطا کریں۔ آمین یارب العالمین

روزنامہ نوائے ملت
روزنامہ نوائے ملتhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے