جمعہ, 30, ستمبر, 2022
ہومبریکنگ نیوزحضرت امیر شریعت کی نانی محترمہ ایک عابدہ، زاہدہ، مجاہدہ اور مثالی...

حضرت امیر شریعت کی نانی محترمہ ایک عابدہ، زاہدہ، مجاہدہ اور مثالی خاتون تھیں: مولانا محمد شمشاد رحمانی قاسمی

حضرت امیرشریعت دامت برکاتہم کی نانی محترمہ کے انتقال پر امارت شرعیہ میں تعزیتی نشست

خانوادہ رحمانی اور امارت شرعیہ بہار،اڈیشہ وجھارکھنڈ کے محبین، متوسلین و منسلکین کے لیے یہ خبر انتہائی جانکاہ اورباعث غم ہے کہ امیرشریعت سابع مفکراسلام حضرت مولاناسید محمد ولی رحمانی نوراللہ مرقد ہ کی ساس اور موجودہ امیر شریعت مخدوم گرامی حضرت مولانا احمد ولی فیصل رحمانی صاحب دامت برکاتہم کی نانی محترمہ کا روز جمعہ مورخہ 19/ اگست 2022 مطابق 20/ محرم الحرام 1444؁ھ کو طویل علالت کے بعد انتقال ہو گیا ہے۔ انا اللہ و انا الیہ راجعون! وہ کئی دنوں سے پٹنہ کے پارس اسپتال میں ایڈمٹ تھیں۔ان کی عمر ایک سو چارسال سے زیادہ تھی، مرحومہ صوم و صلوٰۃ کی پابند،دین دار، مہمان نواز اور انتہائی وضعدار خاتون تھیں۔ اللہ تعالیٰ ان کی مغفرت فرمائے، درجات کو بلند کرے اور پسماندگان کو صبر وثبات کی توفیق عنایت فرمائے۔ آبائی وطن کوئیلور میں ان کی نمازجنازہ بعدعصر اداکی گئی اوروہیں آبائی قبرستان میں تدفین عمل میں آئی۔نماز جنازہ میں قائم مقام ناظم امارت شرعیہ مولانا محمد شبلی القاسمی صاحب نے بھی شرکت کی۔امارت شرعیہ میں آج مورخہ 20/ اگست 2022ء روز سنیچر کو نائب امیر شریعت حضرت مولانا محمدشمشاد رحمانی صاحب کی صدارت میں ایک تعزیتی نشست کا انعقاد ہوا۔ نائب امیر شریعت مد ظلہ نے مرحومہ کے محاسن کا تذکرہ کرتے ہوئے فرمایا کہ وہ ایک زاہدہ، عابدہ اور مجاہدہ خاتون تھیں، عبادت و ریاضت، خاندانی وجاہت، داد و دہش، سخاوت، وضعداری اور جرأت وہمت کے معاملہ میں مثالی خاتون تھیں۔ اللہ تعالیٰ نے ان کو طویل عمر عنایت کی جس کو انہوں نے حقوق اللہ اور حقوق العباد کی ادائیگی کے ساتھ ساتھ اپنی اولاد و احفاد کی بہترین تربیت میں صرف کیا۔ ڈسپلن، وقت کی پابندی، سلیقہ مندی اور حسن انتظام آپ کی زندگی کے اہم عناصر تھے۔ان کے انتقال سے خانوادہ رحمانی کے ساتھ ساتھ امارت شرعیہ ایک بزرگ سرپرست اور شجر سایہ دار سے محروم ہو گئی۔ قائم مقام ناظم مولانامحمد شبلی القاسمی صاحب نے کہا کہ حضرت امیرشریعت مدظلہ کی نانی محترمہ صوم وصلوٰۃکی پابند نیک، دین دار، سخی اورمثالی خاتون تھیں اس زمانہ میں ایسی مثالی خاتون کا تصوربھی مشکل ہے۔ان کی سخاوت و فیاضی کا شہرہ پورے علاقہ میں تھا اور وہاں کے ہر طبقہ کے لو گ ان کی بہت عزت کرتے تھے اور ان کے دلوں میں مرحومہ کے تئیں بہت ہی عقیدت کے جذبات تھے۔ انہوں نے ایکسوچاربرس کی لانبی عمر گذاری اوروہ بتاریخ20محرم الحرام1444 بمطابق 19/اگست 2022ء کو اللہ تعالیٰ کے دربارمیں پہونچ گئیں۔ اللہ تعالیٰ انہیں اپنے جوار رحمت میں جگہ عنایت فرمائے امارت شرعیہ بہاراڈیشہ وجھار کھنڈ اس غم میں اہل خانہ کے ساتھ برابر کے شریک ہیں اورسبھی لوگ دعا گوہیں کہ اللہ تعالیٰ مرحو مہ کی مغفرت فرما ئے اورجملہ وارثین کوصبر جمیل عنایت فرما ئے آمین۔نائب ناظم مولانا مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی، مولانا مفتی سہیل احمد قاسمی صدر مفتی امارت شرعیہ، مولانا سہیل احمد ندوی نائب ناظم امارت شرعیہ نے بھی تعزیتی کلمات کے ساتھ مرحومہ کے محاسن کا تذکرہ کیا۔اس تعزیتی نشست میں یورپ کی عظیم علمی شخصیت مولانا یعقوب منشی اسماعیل کے انتقال پر بھی اظہار تعزیت کیا گیا اور مرحوم کے محاسن کا تذکرہ ہوا۔ آخر میں ان دونوں بزرگ شخصیات کے لیے مجلس نے ایصال ثواب اور مغفرت و بلندی درجات کی دعا کی۔ تعزیتی نشست میں مولانا سہیل اختر قاسمی، مولانا مجیب الرحمن قاسمی، مرزا حسین بیگ،مفتی احتکام الحق قاسمی، مولانا محمد ارشد رحمانی، مولانا احمد حسین قاسمی، مولانا شمیم اکرم رحمانی، مولانا نصیرا لدین مظاہری، سید خبیب صاحب، مولانا راشد العزیری صاحب، مولانا مفتی امتیاز احمد صاحب، مولانا شہنواز احمد مظاہری، مولانا مفتی اسعد اللہ قاسمی، مولانا ممتاز احمد، مولانا منہاج عالم ندوی، مولانا مجاہد الاسلام قاسمی، مولانا ضیاء الاسلام قاسمی، مولانا بدرا نیس قاسمی کے علاوہ دیگر کارکنان امارت شرعیہ موجود تھے۔

توحید عالم فیضی
توحید عالم فیضیhttps://www.nawaemillat.com
روزنامہ ’نوائے ملت‘ اپنے تمام قارئین کو اس بات کی دعوت دیتا ہے کہ وہ خود بھی مختلف مسائل پر اپنی رائے کا کھل کر اظہار کریں اور اس کے لیے ہر تحریر پر تبصرے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔ جو بھی ویب سائٹ پر لکھنے کا متمنی ہو، وہ روزنامہ ’نوائے ملت‘ کا مستقل رکن بن سکتے ہیں اور اپنی نگارشات شامل کرسکتے ہیں۔
کیا آپ اسے بھی پڑھنا پسند کریں گے!

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

- Advertisment -spot_img
- Advertisment -
- Advertisment -

مقبول خبریں

حالیہ تبصرے