محسن انسانیت کی آمد ہمارے لئے باعث فخر: مفتی حفیظ اللہ قاسمی

55

20201111 133223

دھن گھٹا ( سنت کبیر نگر ) 11نومبر (محمد حسان ندوی )
تحصیل دھن گھٹا حلقہ واقع موضع مہولی میں ایک روزہ جلسہ سیرت النبی واصلاح معاشرہ کا انعقاد ہوا،جس کی صدارت مولانا سفیان احمد قاسمی ممبئی اور نظامت مولانا محمد وسیم قاسمی ندوی نے کی،بطور مہمان خصوصی مولانا ومفتی حفیظ اللہ قاسمی ناظم تنظیم جمیعۃ العلماء مہاراشٹر وناظم تعلیمات جامعہ سراج العلوم بھیونڈی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سیرت کا ہر پہلو اور ہر ایک گوشۂ ہمارے لیے نمونہ عمل ہے، ہمیں نبی کے ہر ہر طریقہ کو اختیار کرنا چاہئیے اور نبی کی سنتوں پر عمل کرتے ہوئے آپ کی تعلیمات اور آپ کے طریقے کو ہر ممکن اختیار کرنے کے لئے کوشاں ہونا چاہئے،مولانا نے کہا کہ علماء کرام انبیاء کے وارث ہیں ان کی ہر بات پر لبیک اور ہر ہر نصیحت کو بغور سننا چاہئے،اور دینی تعلیم کو فروغ دینا چاہیے اور اپنے بچوں کی تربیت دینی ماحول میں کرنا چاہئے،
مولانا ومفتی محبوب احمد قاسمی مہتمم مدرسہ عربیہ معراج العلوم چھتہی نے اپنے خطاب میں کہا کہ محسن انسانیت کی آمد ہمارے لئے باعث فخر اور مسرت کی بات ہے اور ہر انسان کے لئے شکر کا مقام ہے کہ خدا تعالیٰ نے اپنے محبوب کو ہمارے لیے اسوہ اور قدوہ بنایا،نبی نے ہر طرح کے آداب کی رعایت اور آداب زندگی سکھایا ہے،اور ہمیں پابند بنایا ہے کہ ہم اٹھتے بیٹھتے ان آداب کی رعایت رکھیں تو ہمارے لئے دنیا وآخرت کی بھلائی ممکن ہے،اور ہم ہر طرح سے سرخرو بھی ہوسکتے ہیں، مولانا محمد مستقیم قاسمی بلرامپوری ناظم مدرسہ عربیہ معراج العلوم چھتہی پوکھرہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ انسان کی زندگی ہر ہر قدم پر سنت اور شریعت کے مطابق گزرے اگر ہم مرد ہیں تو ہماری زندگی اور ہمارا اخلاق عورتوں کے سلسلے میں نرم ہونا چاہئے اور اگر ہم اولاد ہے تو ہمارے لئے والدین کے تئیں خدمت اور ان کے لئے نرم گفتاری سے پیش آنا چاہئے اور ان کی خدمت کو سعادت اور خوشبختی سمجھنا چاہئے،
مولانا حسان احمد قاسمی خطیب جامع مسجد مہولی نے اپنے خطاب میں کہا کہ نبی سے عشق ومحبت کامل ایمان کی ضرورت ہے،اور نبی کو ماننے کے ساتھ ساتھ نبی کی بھی ماننا ضروری ہے،اگر ہمارا عشق نبی کے سلسلے میں کسی بھی درجہ میں کم ہے تو ہمارا ایمان ناقص اور غیر مکمل ھے،اس کے علاوہ مولانا وقاری نفیس احمد قاسمی شیخ الحدیث اصلاح البنات چھتہی،مولانا محمد حسان ندوی،استاذ الاساتذہ نمونہ اسلاف حافظ عبد الرشید فریدہ مارکیٹ مہولی نے بھی خطاب کیا،نعت ومنقبت کا نذرانہ اسد مہتاب،وثیق رہبر،مولانا عبد الغفار مظاھری نے پیش کیا،
اس موقع پر حافظ محمد عیسی،حافظ محمد شاداب،ابو الوفاء خان،عبد الرحمن پردھان،جنید احمد انصاری،حافظ محمد عثمان،نثار احمد،عبد القادر ببلو،عبد الصمد،قیام الدین،سعید اللہ انصاری اور ظفر اللہ انصاری کے علاوہ سیکڑوں لوگ موجود رہے , جلسہ کا اختتام مولانا سفیان احمد قاسمی ممبئی،کی دعا پر اختتام پذیر ہوا